واشنگٹن پوسٹ نے فاش کردیا

امریکی صدارتی انتخابات کے نتائج میں ہیرا پھیری کا امکان

خبر کا کوڈ: 1178052 خدمت: دنیا
هیلاری ترامپ کلینتون

واشنگٹن پوسٹ کی رپورٹ کے مطابق، تمام اقدامات کےاٹھائے جانےکے باوجود، امریکی صدارتی انتخابات کےنتائج میں دھاندلی کا قوی امکان موجود ہے۔

خبررساں ادارے تسنیم کے مطابق، ویلیم آر سوئینی نے واشنگٹن پوسٹ میں امریکہ کےصدارتی انتخابات میں شکست کھانےوالے امیدوارکی طرف سے نتائج میں ہیرا پھیری کے امکانات کے ساتھ ساتھ اس ملک میں ووٹنگ کے عمل کی سالمیت کے مشکوک ہونےکی خبر دی ہے.

انہوں نے لکھا ہے کہ انتخابی نظام کے لئے بین الاقوامی فاؤنڈیشن (IFES) نے گزشتہ تقریبا 30 سالوں کے دوران 145 ممالک سے زائد سیاسی اور انتخابی سالمیت کی حمایت کی ہے۔

انتخابی عمل میں خطرات کی شناخت کے لئے سخت طریقوں اور مختلف ملکوں میں انتخابات کی سالمیت کو فروغ دینے کی لئے بین الاقوامی معاہدوں کے باوجود، انتخابی دھاندلی کے خلاف احتجاج کے متعدد مقدمات کا سلسلہ جاری ہے۔

ترقی پذیرجمہوریتیں، اس طرح کے چیلنجوں کے زیادہ شکارہیں۔ ان ممالک میں قانونی فریم ورک زیادہ تر مقدمات میں غیر واضح ہے اس لئے وہاں کے انتخابات کے نتائج میں ہیرا پھیری کا امکان موجود ہوتا ہے۔

عدم تحفظ، قانون کے سامنے عدم جوابدہی اور ذمہ داری کی کمی بھی اس مشکل کا حصہ ہے.

امریکہ کے 2016ء کےصدارتی انتخابات کو اہم خطرات کا سامنا ہے جو کہ اس ملک میں جمہوریت کے لیے نئے چلنج بن سکتے ہیں۔

امریکی سپریم کورٹ جو کہ چار لیبرل کے مقابلے میں چار قدامت پسند وں پر مشتمل ہے، کی موجودہ ساخت کو دیکھتے ہوئے معلوم ہوتا ہے کہ اس ملک میں انتخابی شکایات کا مرکز نمایاں طور پر کمزورہے.

اگر امیدواروں میں سے کوئی بھی کسی بھی وجہ سے انتخابات کے دوران خلاف ورزیوں کی شکایت کرنا چاہے تو جس ریاست میں دھاندلی ہوئی ہو وہاں کی ہائی کورٹ میں انتخابی دھاندلی کے لئے ایک درخواست جمع کروانا ہوتی ہے۔

ایسی حالت میں، موجودہ دور میں 2000ء کے برعکس، کسی گروہ کو اس کورٹ میں اکثریت حاصل نہیں اور اگر امریکی سپریم کورٹ کے اعضاء کی نظریاتی نقطہ نظر کے مطابق ووٹنگ بھی کی جائے تو اس بارے میں فیصلہ تعطل کا شکار ہوجاتا ہے۔ پس ایسی صورت میں یہ فیصلہ ریاستی عدالتوں کے حوالے کیا جاتا ہے۔  

یہ فیصلہ مختلف ریاستوں میں متصادم فیصلوں  کے لئے ایک مقدمہ اور ووٹوں کی گنتی قانونی تنازعہ بن سکتا ہے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری