عراقی سیکورٹی فورسز اور عوامی رضاکاروں کی ایک اور کامیابی؛

صلاح الدین صوبے میں الشرقاط شہر مکمل طور پر داعش کے چنگل سے آزاد

خبر کا کوڈ: 1193797 خدمت: اسلامی بیداری
ارتش عراق

عراقی فوج کے مشترکہ آپریشنز کے کمانڈر نے ایک منفرد اور اچانک کئے جانے والے ایک آپریشن کے دوران الشرقاط شہر کے داعش کے چنگل سے مکمل طور پر آزاد ہونےکا اعلان کیا۔

خبررساں ادارے تسنیم نے الفرات نیوز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ عراقی مشترکہ آپریشنز کمانڈر یحیٰ رسول الزبیدی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ الشرقاط شہر دہشت گردوں کے ناپاک وجود سے مکمل طور پر آزاد ہوگیا ہے.

انہوں نے مزید کہا کہ الشرقاط کی آزادی نئی کامیابی ہے جو مسلح افواج کے مرکزی کمانڈ کی نظارت اور مشترکہ آپریشنز کمانڈ کی منصوبہ بندی اور کو آرڈینیشن سےحاصل ہوئی ہے۔

الزبیدی نے کہا کہ الشرقاط کی آزادی کی کوشش صلاح الدین آپریشنز کمانڈ کے کمانڈر جمعہ عناد کی کمان، عراقی فوج کے مختلف یونٹس اور عوامی رضاکار فورس کی باہمی شرکت کے ساتھ  شروع ہوئی۔

ان کا کہنا تھا کہ الشرقاط شہر کو عراقی جنگی جہازوں اور بین الاقوامی اتحاد کی حمایت کے ساتھ صرف 72 گھنٹوں میں مکمل طور پر آزاد کرالیا گیا اور سرکاری عمارتوں  پر عراقی پرچم کو گھاڑ دیا گیا۔

انہوں نے اس آپریشن کو نہایت تیز رفتار اور منفرد قرار دیا جس کے نتیجے میں داعش کو بھاری نقصان اٹھانا پڑا۔

یاد رہے کہ عراق کے وزیر اعظم حیدر العبادی نے منگل کی صبح الشرقاط شہر کو داعش کے قبضے سے چھڑانے کے لئے فوجی آپریشن کا حکم دیا تھا۔

الشرقاط شہر داعش کے مرکز "موصل" کے جنوب میں 100 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے.

کہا جاتا ہے کہ ہزاروں باشندوں پرمشتمل یہ شہر جو دریائے دجلہ کے کنارے واقع ہے، اب عراقی فورسز اور عوامی رضاکاروں کے محاصرے میں ہے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری