مقتدر حلقے قائداعظم کے پاکستان کے حصول کے لئے جدوجہد کریں + دستاویز

خبر کا کوڈ: 1193836 خدمت: پاکستان
بیان حلفی

ماہرین کا کہنا ہے کہ مقتدر حلقوں کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ قائداعظم کے پاکستان کے حصول کے لئے اپنی جدوجہد کا آغاز کریں کیونکہ یہ ملک اب قائد اعظم کا نہیں بلکہ آل سعود، آل شریف اور آل زرداری کی ملکیت بن کر رہ گیا ہے۔

خبر رساں ادارے تسنیم کی رپورٹ کے مطابق، پاکستان میں کوئی بھی ایسا قانون موجود نہیں جو حکومت کی جانب سے کئے جانے والے غیر آٓئینی اقدامات کا نوٹس لے، پولیس اور قانون پر عمل درآمد کروانے والے ادارے یعنی عدالت پہلے ہی سیاسی ادارے بن کر رہ گئے ہیں لہٰذا اس مقام پر مقتدر حلقوں کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ قائداعظم کے پاکستان کے حصول کے لئے اپنی جدوجہد کا آغاز کریں کیونکہ یہ ملک اب قائد اعظم کا نہیں بلکہ آل سعود، آل شریف اور آل زرداری کی ملکیت بن کر رہ گیا ہے۔

پاکستانی خبر رساں ادارے شیعیت نیوز نے رپورٹ دی ہے کہ جن اہداف کے حصول کیلئے 30 سال سے زیادہ عرصہ مذہبی تعصب کی بناء پر دیگر مذاہب کی آزادی کو سلب کرنے کی جدوجہد تکفیریوں نے کی، اوروہ ہمیشہ اس کوشش میں ناکام رہے لیکن آج انہیں تکفیری مقاصد کو حکومت پنجاب پولیس اسٹیٹ پالیسی کے تحت پورا کررہی ہے۔

گذشتہ سالوں سے نیشنل ایکشن پلان کے ذریعے ان اہداف کو حاصل کرنے کی کوشیش کی گئی اور اب محرم الحرام کے آغاز کے ساتھ ہی محفل و میلاد کو محدود کرنے اور پاکستانی عوام کی آزادی پر وار کرنے کے لئےمتنازعہ حلف نامہ جاری کیا ہے جسکے تحت مجلس و میلاد کروانے والے عزاداروں اور عاشقان رسول ﷺ کئی پابندیوں پر مشتمل حلف نامے پر کرنے کے پابند ہوں گے، بصورت دیگر محفل و میلاد کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

حکومت پنجاب کا یہ اقدام نظریہ پاکستان سمیت قائداعظم محمد علی جناح کی تعلیمات کی بھی اعلانیہ خلاف ورزی ہے۔ قیام پاکستان کے وقت قائد اعظم نے اعلان کیا تھا کہ "اب پاکستان آزاد ہوگیا ہے جہاں کسی کو اپنے مذہبی عقیدے کے مطابق زندگی بسر کرنے اور رسوم و رواج پر عمل کرنے کی آزاد ی حاصل ہوگئی ہے"۔

افسوس ناک امر یہ ہے کہ خود حکومت کی جانب سے ایسے حلف نامے جاری کرنا اور ان پر طاقت کے بل بوتے علماء و ذاکرین کے دستخط کروانا، بابائے قوم قائد اعظم محمد علی جناح کی روح کو تڑپانا اور ان کے اسلامی نظریے کے تحت آزاد کئے گئے مملکت خداداد پاکستان کے آئین کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری