عمران خان نے اسلام آباد بند کرنے کی دھمکی دیدی

خبر کا کوڈ: 1213480 خدمت: پاکستان
عمران خان

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے 30 اکتوبر کو اسلام آباد بند کرنے کے حوالے سے اہم سرکاری اداروں کے دفاتر کو جانے والی سڑکوں کو بلاک کرنے کا اعلان کیا ہے۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق، انصاف پروفیشنل فورم سے خطاب میں عمران خان کا کہنا تھا کہ اب نواز شریف کو یا تو استعفیٰ دینا پڑے گا یا پھر اپنی ثابت ہوچکی کرپشن کا حساب دینا ہوگا۔

عمران خان نے اپنی تقریر میں اسلام آباد کو بند کرنے کی تاریخ 30 اکتوبر میں تبدیلی کو خارج از امکان قرار نہیں دیا۔

انہوں نے واضح کیا کہ پارٹی کے کارکنان اہم سرکاری اداروں جیسے قومی احتساب بیورو(نیب)، وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے)، فیڈرل بورڈ آف ریوینیو (ایف بی آر) اور الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب جانے والی سڑکوں کو بلاک کریں گے۔

انہوں نے 30 ستمبر کو رائیونڈ مارچ میں ساتھ دینے پر عوام کا شکریہ ادا کیا اور زور دیا کہ اگر وہ پاکستان کو ترقی کرتا ہوا دیکھنا چاہتے ہیں تو آئیں اور اس فیصلہ کن دھرنے میں پی ٹی آئی کا ساتھ دیں۔

عمران خان نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کی موجودہ اور پاکستان پیپلز پارٹی کی سابق حکومت پر اداروں کو کمزور کرنے کا الزام عائد کیا اور کہا کہ نیب نواز شریف، شہباز شریف، اسحٰق ڈار اور خورشید شاہ کے خلاف کارروائی کرنے میں ناکام رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ان کی جنگ کرپشن کے خلاف ہے، اگر ادارے مضبوط ہوں گے تو ملک مضبوط ہوگا۔

عمران خان نے کہا کہ ن لیگ کی حکومت نے ملکی قرضوں میں دوگنا اضافہ کیا ہے اور بین الاقوامی سطح پر پاکستانی کی خودمختاری کو نقصان پہنچایا ہے۔

عمران خان نے کہا کہ پی ٹی آئی کے کارکنان گزشتہ 6 ماہ سے کرپشن کے خلاف انصاف کے حصول کے لیے تگ و دو کررہے تھے لیکن اب انہیں انصاف کے حصول لیے سڑکوں پر آکر پرامن احتجاج کا حق استعمال کرنے پر مجبور کردیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ عمران خان نے وزیراعظم نواز شریف کو محرم تک کی  ڈیڈلائن دی تھی کہ وہ اپنے آپ کو احتساب کے لئے پیش کر دیں۔

دوسری جانب، پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی جانب سے اسلام آباد کو بند کرنے کے منصوبے کے حوالے سے اسپیکر ایاز صادق نے صحافیوں سے بات چیت کے دوران کہا ہے کہ عمران خان کو یہ سوچنا چاہیے کہ ان کے اس اقدام سے کس کو نقصان ہوگا۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری