سربراہ لشکر طیبہ:

داعش امریکہ، بھارت اور اسرائیل کی سرمایہ کاری سے پروان چڑھی ہے

خبر کا کوڈ: 1227378 خدمت: دنیا
لشکر طیبہ

لشکر طیبہ کے سربراہ نے داعش سے لاتعلقی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ لشکر طیبہ کشمیر کی جہادی جماعت ہے جو اسلامی قوانین کے عین مطابق ظلم کے خلاف برسر پیکار ہے جبکہ داعش مسلمانوں کی قاتل تنظیم امریکہ، بھارت اور اسرائیل کی سرمایہ کاری سے پروان چڑھی ہے۔

خبررساں ادارے تسنیم کے مطابق، لشکر طیبہ نے داعش کو مسلمانوں کی قاتل جماعت قرار دیتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ لشکر طیبہ کا داعش سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

لشکر طیبہ کے ترجمان ڈاکٹر عبداللہ غزنوی نے جماعت کے سربراہ محمود شاہ کے حوالے سے بیان جاری کیا ہے کہ لشکر طیبہ کشمیر کی جہادی جماعت ہے جو اسلامی قوانین کے عین مطابق ظلم کے خلاف برسر پیکار ہے۔

محمود شاہ نے واضح کیا ہے کہ داعش مسلمانوں کی قاتل جماعت ہے جو امریکہ، بھارت اور اسرائیل کی سرمایہ کاری سے پروان چڑھی ہے۔

لشکر طیبہ کے سربراہ نے کہا کہ بھارت نے گذشتہ 7 دہائیوں سے کشمیر میں ظلم و بربریت کا بازار گرم کر رکھا ہے۔

بھارتی مظالم اور پرتشدد کارروائیوں سے عورتوں اور بچوں سمیت 5 لاکھ بےگناہ کشمیری شہید ہو چکے ہیں، ہمارا جہاد اسی ظلم کے خلاف ہے۔

انہوں نے تاکید کی کہ ہماری جماعت اسلامی قوانین کے عین مطابق ظلم کے خلاف برسر پیکار ہے جبکہ داعش بھارت، امریکہ اور اسرائیل کی سرپرستی میں پلنے والی دہشتگرد تنظیم ہے جو اسلام اور مسلمانوں کی دشمن ہے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری