پاکستان نے اپٹیکا 2016 میں 3 سونے اور 6 چاندی کے تمغے اپنے نام کر لئے

خبر کا کوڈ: 1259506 خدمت: پاکستان
اپیکٹا

پاکستان نے ایشیاپیسیفک آئی سی ٹی الائنس ایوارڈ 2016 کی تقریب میں تین گولڈ اور 6 چاندی کے تمغے جیت لیے۔

خبر رساں ادارے تسنیم نے ڈان نیوز کے حوالے سے بتایا ہے کہ پاکستان نے ایشیاپیسیفک آئی سی ٹی الائنس ایوارڈ 2016 کی تقریب میں تین گولڈ اور 6 چاندی کے تمغے جیت لیے۔

پاکستان سوفٹ ویئرہاؤس ایسوسی ایشن فار آئی ٹی اینڈ آئی ٹی ای ایس کے اعلان کے مطابق ایوارڈز کی تقریب تائی پے میں منعقدہ ہوئی۔

ایشیا پیسفک آئی سی ٹی الائنس ایوارڈ (اپیکٹا ایوارڈ) ایک عالمی ایوارڈ پروگرام ہے جس کا مقصد عوام میں انفارمیشن اور کمیونی کیشن ٹیکنالوجی کے حوالے سے آگاہی فراہم کرنے کے علاوہ خطے میں آئی سی ٹی انویٹرز اور اپنے کاروبار کرنے والے حضرات کے لیے نیٹ ورک اور پروڈکٹ کے بے پناہ مواقع فراہم کرنا ہے۔

نیشنل یونیورسٹی سائنس اینڈ ٹیکنالوجی (نسٹ) کے نوجوان طلبا کی ٹیم نے اپنے منصوبے 'کلینکل ڈسیجن سپورٹ سسٹم فار ڈائیگنوسس آف موومنٹ ڈس آرڈر' کے لیے سونے کا تمغہ جیت لیا۔

نسٹ کے ہی طلبا کے ایک اور گروہ نے بھی سونے کا تمغہ حاصل کیا، ان کے ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ پروجیکٹ کا نام 'اینالسس آف آپٹکل کوہرینس ٹوموگرافی امیج فار سی ڈی ایس ایس' تھا۔

طالب علموں کو ان منصوبوں کے لیے سابق انٹیلی جنس افسران کی غیر منافع بخش تنظیم کا تعاون حاصل تھا۔

پاکستان کی آئی ٹی کمپنیوں کی ایجادات کو نمایاں کرنے لیے پاکستان سوفٹ ویئرہاؤس ایسوسی ایشن کا 41 رکنی وفد تائی پے میں چار روزہ 16 ویں سالانہ اپیکٹا ایوارڈز تقریب میں شرکت کے لیے گیا تھا۔

مقابلوں میں پاکستان کی 28 ٹیموں نے حصہ لیا جبکہ ایشیائی خطے کے 17 ممالک کی 236 ٹیمیں شامل تھیں اور جج کے فرائض 60 سے زائد ٹیکنالوجی ماہرین نے ادا کئے۔

پاکستان سوفٹ ویئرہاؤس ایسوسی ایشن کی صدر جہاں آرا نے کہا کہ 'پاکستان سوفٹ ویئرہاؤس ایسوسی ایشن نے پاکستان میں وقت کے ساتھ ایک دفعہ آئی ٹی کی صنعت کی حقیقی قابلیت اور وسیع صلاحیت کو نمایاں کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم پاکستان سے ٹیکنالوجی کے ماہرین کو پیدا کررہے ہیں جو'خطے میں بہترین کمپنی یا پروڈکٹ کے طورپر جانے جاتے ہیں، ان سے مقابلہ کرتے ہیں'۔

جہاں آرا نے مزید کہا کہ اس کامیابی کا سہرا تمام ٹیموں، ان کے معاونین اور ججز کو جاتا ہے جواکتوبر سے مجموعی اور انفرادی طور پر سخت محنت کر رہے تھے۔

پاکستان سوفٹ ویئرہاؤس ایسوسی ایشن فار آئی ٹی اینڈ آئی ٹی ای ایس کا قیام 1992 میں عمل میں آیا تھا اور اس کے اراکین کی ایک بڑی تعداد ہے جو ملک بھر میں 450 سے زائد کمپنیوں پر مشتمل ہے۔

اس تنظیم کا بنیادی مقصد پاکستان میں سوفٹ ویئر اور سروس انڈسٹری کو فروغ اور ترقی دینے اور اپنے اراکین کے حقوق کا تحفظ کرنا ہے۔

    تازہ ترین خبریں