سمندری طوفان "وردھا" بھارت سے ٹکراگیا

خبر کا کوڈ: 1265730 خدمت: دنیا
وردھا طوفان

بھارت کی جنوبی ریاستوں کے ساحلی شہروں میں طوفان اور بارشوں کے باعث ہزاروں افراد کو نقل مکانی کرنی پڑی جب کہ کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے بھارت کی بحری اور فضائی افواج کو ہائی الرٹ کردیا گیا۔

خبر رساں ادارے تسنیم نے ڈان نیوز کے حوالے سے بتایا ہے کہ وردھا نامی طوفان 100 کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے جنوبی بھارت کی ریاستوں آندھرا پردیش اور تامل ناڈو سے ٹکرایا جس کی وجہ سے ان ریاستوں کے ساحلی علاقوں میں تیز ہواؤں کے ساتھ موسلا دھار بارش کا سلسلہ جاری ہے۔

طوفان کے باعث کئی اضلاع میں مواصلاتی نظام درہم برہم ہوگیا جبکہ سیکڑوں درخت اکھڑ کر سڑکوں پر آگرے تاہم اب تک کسی جانی نقصان کی اطلاع سامنے نہیں آئی ہے۔

جنوبی بھارت کے عہدیداروں کے مطابق محکمہ موسمیات کی جانب سے سمندری طوفان ’وردھا‘ کی وارننگ جاری کیے جانے کے بعد مختلف نشیبی علاقوں سے ہزاروں افراد محفوظ مقامات کی جانب نقل مکانی کر گئے جب کہ سمندر میں پھنسے 8 ماہی گیروں کو باحفاظت نکال لیا گیا۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق وردھا طوفان کے جنوبی ریاستوں کے ساحلوں سے ٹکرانے کے بعد ریاست آندھرا پردیش اور تامل ناڈو میں اسکول اور دفاتر بند کردیے گئے۔

قدرتی آفات سے نمٹنے والے اداروں اور پولیس کے مطابق تیز طوفانی ہواؤوں کے چلنے اور بارش کے باعث نشیبی علاقوں کے 15 ہزار افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کردیا گیا ہے۔

آندھرا پردیش کے وزیر پی نارائن نے بھارتی خبر رساں ادارے پریس ٹرسٹ آف انڈیا(پی ٹی آئی) کو بتایا کہ وردھا طوفان کی وارننگ جاری کئے جانے کے بعد 9 ہزار 400 افراد صوبے کے دیگر 7 محفوظ علاقوں کی طرف منتقل ہوچکے ہیں۔

قدرتی آفات سے نمٹنے والے تامل ناڈو کے ادارے کے مطابق طوفان کا الرٹ جاری ہونے کے بعد 7 ہزار افراد محفوظ مقامات پر منتقل ہوچکے ہیں، جب کہ بحریہ کے ڈاکٹرز اور امدادی کارکنوں کو الرٹ کردیا گیا ہے۔

تامل ناڈو انتظامیہ کے مطابق وردھا طوفان پیر کے روز کسی بھی وقت دارالحکومت چنئی کے ساحلوں سے ٹکرا سکتا ہے، اس لیے قدرتی آفات سے نمٹنے والے ادارے کی 15 ٹیمیں ہنگامی صورتحال پر قابو پانے کے لیے تعینات کردی گئی ہیں۔

بھارت کے عہدیداروں کے مطابق ایمرجنسی کی صورت میں بھارتی بحریہ کے بیڑوں اور بھارتی فضائیہ کے طیاروں کو بھی الرٹ رہنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

یاد رہے کہ وردھا نامی طوفان گزشتہ ہفتے خلیج بنگال اور بحرہند میں واقع انڈمان کے جزائر سے ٹکرانے کے بعد بھارت کی جنوبی ریاستوں میں پہنچا ہے، طوفان کے باعث انڈمان کے جزائر کو سیاحوں سے خالی کرادیا گیا تھا۔

خیال رہے کہ بھارت کے جنوبی حصے میں آندھرا پردیش، تامل ناڈو، کرناٹک، کیرالہ اور تلنگانہ ریاستیں واقع ہیں، بھارت کی جنوبی اور مشرقی ریاستوں میں اکثر سیلاب اور طوفان آتے رہتے ہیں۔

رواں برس جولائی میں بھی بھارت کی شمالی ریاستوں میں بارشوں اور لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے 40 سے زائد افراد اور لاکھوں لوگ بے گھر ہوئے تھے، جولائی میں ہونے والی بارشوں اور لینڈ سلائیڈنگ سے بھارت اور نیپال میں مجموعی طور پر 90 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اس سے قبل گزشتہ سال بھارت کی جنوبی ریاست تامل ناڈو کے درالحکومت چنئی سمیت دیگر شہروں میں شدید بارشوں کے بعد سیلاب کے باعث 200 افراد ہلاک جب کہ ہزاروں افراد بے گھر ہوئے تھے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری