پاکستانی مسلمانوں کا خون نہایت سستا/ ایک ہی روز میں 3 افراد پر حملہ، 2 شہید 1 زخمی

خبر کا کوڈ: 1307163 خدمت: اسلامی بیداری
پرچم پاکستان

کراچی میں کالعدم دہشتگرد جماعت سپاہ صحابہ نے 24 گھنٹوں کے دوران محب وطن پاکستانیوں کو شیعہ مسلمان ہونے کے جرم میں قتل کرڈالا۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق، گذشتہ روز 24 جنوری کو کالعدم دہشتگرد جماعت سپاہ صحابہ کے دہشتگردوں نے قصبہ کالونی میں پہلے ایک شیعہ مسلمان محمد حسین کو فائرنگ کرکے شہید کر دیا۔

ابھی اس شہید کو دفنا کر انکے لواحقین اور مومنین وادی حسین (ع) سے واپس آرہے تھے کہ کلفٹن میں ایف سی کے اہلکار وجاحت حسین بھی تکفیری دہشتگردوں کی بربریت کا نشانہ بنے۔

وجاحت حسین ایف سی اہلکار تھے اور کلفٹن کراچی میں قائم ایرانی سفارت خانے میں پاکستان سیکورٹی اداروں کی ہدایت پر حفاظت کے کاموں پر مامور تھے وہ اپنی ڈیوٹی نبھاکر واپس گھر جارہے تھے کہ راستہ میں تکفیری دہشتگردوں نے ان پر حملہ کیا جس کے نتیجے میں وہ زخمی ہوگیا۔

اس کے بعد ان تکفیری دہشتگردوں نے قاری قرآن کو بھی نہیں چھوڑا اور محمد کاظم نامی شیعہ مسلمان کو گلستان جوہر میں شہید کردیا۔

ایک ہی دن میں شہر کے مختلف علاقوں میں ان تین شیعہ مسلمانوں کی شہادتیں اور ان شہادتوں پر حکومت اور سیکورٹی اداروں کی مجرمانہ خاموشی قابل افسوس ہے۔

واضح رہے کہ 4 روز قبل ہی پاکستان کے پرامن شیعہ اکثریتی علاقے پاراچنار میں ایک خطرناک دہشتگردانہ حملہ ہوا تھا جس میں 25 شیعہ مسلمان شہید جبکہ 70 سے زائد زخمی ہوئے۔

یاد رہے کہ اس دہشتگردی کی ذمہ داری بھی لشکر جھنگوی اور تحریک طالبان نے قبول کی تھی جبکہ بروقت تعزیتی اور مذمتی بیانات دے کر حکومت نے بھی اپنا فرض منصبی ادا کر دیا تھا۔

پاراچنار اور کراچی میں ہونے والی دہشتگردی اس جانب واضح اشارہ ہے کہ پاکستان میں مسلمانوں اور خاص طور پر شیعیہ مسلمانوں کا لہو بہت سستا ہو گیا ہے۔

    تازہ ترین خبریں