پی او ایف مشرق وسطیٰ میں دفاعی اور فوجی ضروریات کی فراہمی کیلیے امارات میں دفتر کھولے گا

خبر کا کوڈ: 1334170 خدمت: پاکستان
پی او ایف

پاکستان آرڈیننس فیکٹری کے چیئرمین سابق لیفٹیننٹ جنرل عمر محمد حیات نے متحدہ عرب امارات کو اسلام آباد کیلئے ایک اہم ملک قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ پی او ایف مشرق وسطیٰ میں دفاعی اور فوجی ضروریات کی فراہمی کے لیے متحدہ عرب امارات میں اپنا دفتر کھولے گا۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق، ابوظہبی میں جاری بین الاقوامی دفاعی نمائش اور کانفرنس کے دوران پی او ایف کے چیئرمین سابق لیفٹیننٹ جنرل عمر محمد حیات نے اپنے ایک انٹرویو میں کہا کہ متحدہ عرب امارات ہمارے لیے ایک اہم ملک ہے اور پاکستان آرڈیننس فیکٹری (پی او ایف) مشرق وسطیٰ میں دفاعی اور فوجی ضروریات کی فراہمی کے لیے متحدہ عرب امارات میں اپنا دفتر کھولے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ بدقسمتی سے پاک امارات مضبوط تعلقات کی جھلک ہماری دفاعی برآمدات میں نظر نہیں آتی اور گزشتہ تین سال کے دوران متحدہ عرب امارات کو ہماری برآمدات صرف 50 لاکھ سے ایک کروڈ ڈالر کے درمیان رہی۔

انھوں نے کہا کہ ہم متحدہ عرب امارات میں سیلز اور مارکیٹنگ کا ایک دفتر کھولنے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں جو صرف اس ملک کا ہی نہیں بلکہ پورے خطے کا احاطہ کرے گا۔

عمرحیات کا کہنا تھا کہ متحدہ عرب امارات، مشرق وسطی کا تجارتی مرکز بن چکا ہے اس لیے یہاں پر ایک سال کے اندر اپنے دفتر کی بنیاد رکھنے کا بہتر موقع ہے۔

پی او ایف کے چیئرمین نے کہا کہ ہم اپنے مرکزی برآمدات کے اہداف کے تحت بہتر ٹیکنالوجی کے ساتھ غیرملکی مارکیٹ میں فروخت کو بڑھانے پر دل جمعی سے توجہ مرکوز کررہے ہیں۔

یاد رہے کہ جس ملک کو پاکستان کے لئے نہایت اہم قرار دے کر پی او ایف کے چیئرمین پاکستان کے سب سے بڑے اسلحہ ساز ادارے کا دفتر کھولنے کا ارادہ کئے ہوئے ہیں، اس ملک کے لئے پاکستان اس قدر اہم ہے کہ پچھلے 8 سال سے برڈ فلو کے خطرے کے پیش نظر پاکستان سے وہاں ایک انڈا، ایک مرغی تک برآمد کرنے پر پابندی عائد تھی جو کہ 3 روز قبل ہی اٹھائی گئی ہے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری