چارسدہ دھماکے کی ذمہ داری جماعت الاحرار نے قبول کر لی

خیبر پختوانخواہ کے ضلع چارسدہ میں واقع سیشن کورٹ پر دہشت گردوں کے حملے اور خود کش دھماکے کی ذمہ داری بھی کالعدم تنظیم جماعت الاحرار نے قبول کر لی۔

چارسدہ دھماکے کی ذمہ داری جماعت الاحرار نے قبول کر لی

خبر رساں ادارے تسنیم نیوز کے مطابق، چارسدہ میں سیشن کورٹ میں خود کش دھماکے کی ذمہ داری کالعدم تنظیم جماعت الاحرار نے قبول کرلی ہے۔

ریسکیو ذرائع کی اب تک کی اطلاع کے مطابق، چارسدہ سیشن کورٹ میں ہونے والے خود کش دھماکوں کے نتیجے میں 2 پولیس اہلکاروں سمیت 7 افراد شہید جبکہ 20 زخمی ہوگئے ہیں۔

واضح رہے کہ  لاہور میں پنجاب اسمبلی کے باہر خودکش حملے کرنیوالی کالعدم دہشت گرد تنظیم جماعت الاحرار نے "آپریشن غازی" کے نام سے دہشتگردی کی نئی لہر شروع کرنے کا اعلان کیا تھا۔

کالعدم دہشت گرد تنظیم نے یہ باضابطہ اعلان ویڈیو جاری کرتے ہوئے کیا ہے۔

دہشت گردوں نے اپنے نئے آپریشن کا نام لال مسجد میں ہلاک ہونے ہونیوالے "غازی عبدالرشید" کی مناسبت سے رکھا ہے جبکہ دہشت گردوں نے آپریشن غازی میں اسمبلیوں، سیکورٹی فورسز، عدلیہ، وکلاء، بنک، بلاگرز، میڈیا ہاﺅسز اور خاص طور پر پاک فوج کو نشانہ بنانے کا اعلان کیا تھا۔

دوسری جانب حکومت، پاک فوج اور سیکورٹی ادارے مل کر جماعت الحرار کے خلاف بڑی کارروائی کر رہے ہیں۔

اس سلسلے میں پاک افغان بارڈر پر بھی سیکورٹی سخت کردی گئی ہے جبکہ افغانستان سے سرحد عبور کرنے والے دہشت گردوں کو بھی دیکھتے ہی گولی مار دینے کی ہدایات ہیں۔

تاہم ملک میں جاری دہشتگردی کی تازہ لہر تھمنے میں ہی نہیں آ رہی ہے اور پاکستان کے معصوم شہریوں کا خون ناحق مسلسل بہہ رہا ہے۔

سب سے زیادہ دیکھی گئی پاکستان خبریں
اہم ترین پاکستان خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری