اے گدا خواب سے بیدار کہ سلطاں آیا !

آج جوش ملیح آبادی کی 35ویں برسی منائی جا رہی ہے

خبر کا کوڈ: 1336119 خدمت: پاکستان
جوش ملیح آبادی

ممتاز شاعر شبیر حسن المعروف جوش کی آج 35ویں برسی منائی جارہی ہے۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق، ممتاز شاعر جوش ملیح آبادی کی آج 35ویں برسی منائی جارہی ہے۔

شبیرحسن المعروف جوش نے متعدد غزلیں اور نظمیں لکھیں۔

ان کی تصانیف میں شعلہ و شبنم، جنون و حکمت، فکر و نشاط، حرف و حکایت، عرفانیت جوش اور یادوں کی بارات شامل ہیں۔

وہ اردو زبان کے ایک مایہ ناز شاعر تھے۔ اپنے مخصوص انداز بیاں کے باعث آج بھی ان کو شعر و ادب کی دنیا میں ایک ممتاز مقام حاصل ہے۔

جوش کی ایک معروف غزل ان کی یاد میں قارئین کی خدمت میں پیش کی جاتی ہے۔

غم   دے   کے  مجھے   اس   نے   یہ   ارشاد   کیا
جا     تجھے   کشمکش    دہر     سے    آزاد    کیا
وہ  کریں   بھی   تو  کن   الفاظ   میں   تیرا   شکوہ
جن   کو    تیری    نگہ   لطف    نے    برباد    کیا
دل کی چوٹوں نے کبھی چین سے رہنے نہ  دیا
جب   چلی   سرد   ہوا   میں   نے  تجھے  یاد  کیا
اے میں  سو جان   سے  اس   طرز تکلم  کے  نثار
پھر   تو    فرمائیے   کیا   آپ   نے   ارشاد    کیا
اس  کا  رونا نہیں  کیوں  تم   نے   کیا   دل  برباد
اس  کا   غم   ہے  کہ   بہت   دیر  میں  برباد  کیا
اتنا  مانوس  ہوں   فطرت  سے  کلی   جب  چٹکی
جھک کے میں نے یہ کہا مجھ سے کچھ ارشاد کیا
میری  ہر  سانس  ہے اس بات  کی  شاہد اے  موت
میں  نے  ہر  لطف  کے  موقع  پہ  تجھے  یاد   کیا
مجھ  کو   تو   ہوش   نہیں   تم   کو   خبر   ہو   شاید
لوگ   کہتے  ہیں  کہ   تم   نے   مجھے   برباد   کیا
کچھ  نہیں اس  کے  سوا  جوشؔ  حریفوں  کا   کلام
وصل    نے   شاد     کیا    ہجر    نے    ناشاد   کیا

جوش ملیح آبادی 1982ء میں آج ہی کے دن 22 فروری کو اسلام آباد میں انتقال کرگئے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری