پاکستان اور کیوبا کا معاشی تعلقات کو مزید مستحکم بنانے پر اتفاق

خبر کا کوڈ: 1344227 خدمت: پاکستان
رضا ربانی حزب مردم پاکستان

چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی نے کہا ہے کہ دونوں ملکوں کو موجودہ اچھے تعلقات کو مزید مستحکم سیاسی اور تجارتی روابط میں بدلنا ہوگا.

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق پاکستان اور کیوبا نے دو طرفہ تعلقات کے فروغ میں جاری پیش رفت کو برقرار رکھنے اور معاشی تعلقات کو مزید مستحکم بنانے پر اتفاق کیا ہے۔

چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی نے کہا ہے کہ دونوں ملکوں کو موجودہ اچھے تعلقات کو مزید مستحکم سیاسی اور تجارتی روابط میں بدلنا ہوگا، پاکستان کا انتہائی اہم جغرافیائی محل وقوع دیگر ممالک کو وسطیٰ ایشیائی ممالک چین اور ایران کے ساتھ تجارت کیلئے اہم راہداری فراہم کرتا ہے۔

انہوں نے ان خیالات کا اظہار جمعرات کو ہوانا میں کیوبا کے نائب صدر مگیول دیاز کنال سے ملاقات کے دوران کیا۔

واضح رہے کہ میاں رضاربانی کیوبا کے دورے کے دوران پاکستان کے پارلیمانی وفد کی قیادت کر رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اپنے ہمسایہ ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات کا خواہاں ہے تاہم بھارت نے پاکستان کی امن کی خواہش کا مثبت جواب نہیں دیا، بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں کشمیریوں پر ڈھائے جانے والے مظالم اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر دنیا کو خاموش نہیں رہناچاہیے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت نے پاکستان میں ہونیوالے سارک کے اجلاس کو بھی سبوتاژ کیا ہے ۔ چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف دنیا کی تمام اقوام کے مقابلے میں زیادہ نقصان اٹھایا ہے اور دہشت گردی کے خاتمے کیلئے پاکستانی قوم کی قربانیوں کے ساتھ ساتھ کوششیں بھی فقید المثال ہیں ۔

چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ دونوں ملکوں کے مابین تعلقات کے فروغ میں ہونیوالی موجودہ پیش رفت باعث اطمینان ہے لیکن دونوں ملکوں کے مابین تعلقات کو مزیدمستحکم بنانے اور باہمی تجارت سمیت تمام شعبوں میں تعاون کیلئے بے پناہ مواقع موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دونوں ملکوں کے ایوانوں کے مابین وفود کے تبادلوں اور انٹر پارلیمانی یونین کے فورم پر باہمی تعاون قابل ذکر ہے۔ جس کی بنیاد پر مستقبل کے تعلقات کو استحکام دینے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ 2005ء کے زلزلے کے دوران کیوبا کی امداد پاکستانیوں کی نظر میں بروقت اور قابل تعریف عمل ہے۔ اور پاکستان نے بھی کیوبا میں آنے والے سمندری طوفان کے دوران کیوبا کے عوام کی بھر پور معاونت کی کوشش کی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت پاکستان کی جانب سے دونوں ملکوں کے سفارتی تعلقات کی یاد گار کے طور پر چاول کا تحفہ بھی اس سلسلے میں ایک اہم قدم ہے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری