سچ بولنے کی سزا بھگت رہے ہیں؛ فورسز میں 80 فیصد افسران بدعنوان ہیں: تیج بہادر

خبر کا کوڈ: 1402596 خدمت: دنیا
تیج بہادر

بی ایس ایف کے برطرف سپاہی تیج بہادر یادیو نے ایک نئے انکشاف میں کہا ہے کہ بی ایس ایف میں 80 فیصد افسران کرپٹ ہیں اور وہ سچ بولنے کی سزابھگت رہے ہیں۔

خبررساں ادارے تسنیم کے مطابق ناقص کھانے کی شکایت کرنے والے بی ایس ایف کے برطرف سپاہی تیج بہادر یادیو نے ممبئی میں ایک تقریب میں انہوں نے کہا کہ وہ سچ بولنے کی سزا بھگت رہے ہیں۔

تیج بہادر نے نیا انکشاف کیا کہ حکومت انہیں 18 مختلف کھانے بھیجتی ہے لیکن انتظامیہ کی جانب سے سپاہیوں کو بس کھچڑی دی جاتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سسٹم ہی کرپٹ ہے لیکن تمام افسران نہیں، فورسز میں 80 فیصد افسران بدعنوان ہیں۔

یاد رہے کہ تیج بہادر یادیو نے دیگر سابق سپاہیوں کے ساتھ مل کر 14مئی کو جنتر منتر پر ایک روزہ احتجاج کا اعلان کررکھا ہے۔

واضح رہے کہ بی ایس ایف کے سابق سپاہی تیج بہادر نے ایک ویڈیو پیغام میں بھارتی سماہیوں کو ملنے والے ناقص کھانے کی شکایت کی تھی جس کے بعد سے اسکے خلاف انکوائری کا سلسلہ شروع ہو گیا اور اسے ڈسپلن کی خلاف ورزی کا بہانہ بنا کر نوکری سے بھی برطرف کردیا گیا تھا۔

اس پر دنیا سمیت بھارت میں میں بی ایس ایف کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا کہ اگر تیج بہادر میں ڈسپلن نہیں تھا تو اسے پہلے نوکری سے برطرف کیوں نہیں کیا گیا؟ اس کے خلاف تبھی ایکشن کیوں لیا گیا ہے جب اس نے بھارتی فوج کا بھانڈا پھوڑا؟؟

اپنی نوکری سے برطرفی کے حوالے سے ممبئی میں ہونے والی ایک تقریب میں انہوں نے کہا کہ وہ سچ بولنے کی سزا بھگت رہے ہیں۔

 

 

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری