انتہاپسندی کی جانب ایک اور قدم؛ بھارت میں گائے، بیل، بھینس اور اونٹ ذبح کرنے پر پابندی

خبر کا کوڈ: 1420967 خدمت: دنیا
گائے

بھارت نے شدت پسندی کا ایک اور سنگ میل پار کرتے ہوئے ملک بھر میں گائے، بیل، بھینس اور اونٹ کو ذبح کرنے پر پابندی عائد کردی ہے۔

خبررساں ادارے تسنیم کے مطابق بھارت میں میں گائے، بیل، بھینس اور اونٹ کو ذبح کرنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

واضح رہے کہ پابندی عائد ہونے کے بعد یہ جانور ذبیحہ کیلیے فروخت بھی نہیں کیے جا سکیں گے۔

سرکاری احکام کے مطابق ان جانوروں کی خرید و فروخت صرف زرعی مقاصد کیلیے ہوگی۔

جبکہ خریدنے والے کو حلف نامہ بھی جمع کرانا پڑے گا کہ وہ گائے، بیل، بھینس یا اونٹ کو ذبح کرنے کیلیے نہیں بلکہ زرعی مقاصد کیلیے خرید رہا ہے۔

بھارت کی وزارت ماحولیات نے انسداد بے رحمی حیوانات قانون کے تحت جاری نوٹیفکیشن میں جانوروں کی منڈیوں کے انجمن کے عہدے داروں کو پابند کیاہے کہ منڈی میں کوئی شخص کوئی بچھڑا، گائے، بھینس، بیل یا اونٹ لے کرنہیں آئے گا۔

نوٹیفکیشن کے مطابق اگرکوئی شخص جانور لے کر منڈی میں آئے گا تو اس کے پاس مالک کانام، پتہ اور تصویر کے ساتھ ایک دستاویز ہونا لازمی ہے جس پر یہ یقین دہانی کرائی گئی ہوکہ اس جانورکوذبح نہیں کیا جائے گا۔

اینیمل ویلفیئربورڈکے سابق عہدیدار این جی جیاسمہا کا کہناہے کہ ذبیحہ کیلیے جانورصرف باڑے سے خریدا جا سکے گا۔

بھارت بھر میں اس پابندی کا نوٹیفکیشن جاری کردیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ بعض تنظیموں اور سیاسی حلقوں کی جانب سے بھارت کے اس شدت پسند قدم کی مذمت کی جارہی ہے۔ 

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری