پاکستان کے لئے ایران مقدم / سعودی اتحاد میں شمولیت محدود کرنے کا فیصلہ

خبر کا کوڈ: 1422267 خدمت: پاکستان
پرچم ایران و پاکستان

پاکستانی اخبار نے دعوی کیا ہے کہ ریاض میں ہونے والی حالیہ عرب اسلامک امریکا سربراہ کانفرنس میں ایران کے خلاف سعودی حکام کے کھلے بیانات کے بعد پاکستان نے سعودی اتحاد میں قائم ہونے والے فوجی اتحاد میں شمولیت محدود کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

خبررساں ادارے تسنیم نے ایکسپریس ٹریبیون کے حوالے سے خبر دی ہے کہ پاکستان نے ہمسایہ ملک ایران سے تعلقات پر منفی اثرات سے بچنے کیلئے سعودی اتحاد میں قائم ہونے والے فوجی اتحاد میں شمولیت محدود کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ 

پاکستانی اخبار کا دعوی ہے کہ اس معاملے پر نظرثانی کا فیصلہ ریاض میں ہونے والی حالیہ عرب اسلامک امریکا سربراہ کانفرنس میں سعودی حکام کے بیانات کے بعد کیا گیا جن میں کہا گیا تھا کہ اتحاد کا مقصد دہشت گردی کیخلاف جنگ کے ساتھ ساتھ ساتھ ایران کو بھی کاؤنٹر کرنا ہے۔

حکومت اصولی طور پر سعودی اتحاد کا حصہ بننے پر تیار ہے اگر اسکا واحد مقصد دہشت گردی اور شدت پسندی کیخلاف لڑنا ہو تاہم حکام کے مطابق حتمی فیصلہ اس وقت ہوگا جب اتحاد کے ٹرمز آف ریفرنس (ٹی او آرز) تیار ہو جائیں گے، ٹی او آرز رکن ممالک کے وزرائے دفاع کے اجلاس میں فائنل کیے جائیں گے۔

ایک سینئر عہدیدار نے بتایا کہ پاکستان اپنی تجاویز وزرائے دفاع کے اجلاس میں پیش کرے گا جس کا انعقاد اگلے چند ہفتوں میں ہوگا، پاکستان تجویز پیش کرے گا کہ اتحاد کا واضح مقصد دہشتگردی کیخلاف جنگ ہونا چاہیے، اس سے انحراف کیا گیا تو نہ صرف امہ مزید تقسیم ہو جائے گی بلکہ فوجی اتحاد کو بھی نقصان ہوگا، ہمارا نکتہ نظر بہت واضح ہے کہ ہم صرف دہشت گردی کیخلاف جنگ کیلئے اس اتحاد میں شامل ہوں گے۔

ادھر ترجمان دفتر خارجہ نفیس زکریا نے بھی کہا کہ پاکستان نے بھی فوجی اتحاد میں شمولیت کا حتمی فیصلہ نہیں کیا، ابھی اس اتحاد کے ٹی او آرز کا فیصلہ ہونا باقی ہے، ہمیں قیاس آرائیوں میں الجھنے کے بجائے وزرائے دفاع کی میٹنگ کا انتطار کرنا چاہیے جس میں اس کی تمام جہتوں کا تعین کیا جائیگا۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری