امریکی پابندیاں تحریک آزادی کشمیر پر اثر انداز نہیں ہوسکتیں، سید صلاح الدین

خبر کا کوڈ: 1450865 خدمت: اسلامی بیداری
سید صلاح الدین

حزب المجاہدین کے امیر کا کہنا ہے کہ امریکا نے پاکستان دشمنی اور بھارت کو مطمئن کرنے کیلیے آزادی کی جنگ لڑنے والے کو دہشت گرد قرار دیا جو دنیا کا سب سے بڑا جھوٹ ہے جبکہ پابندیوں سے ہماری تحریک پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق مظفرآباد میں متحدہ جہاد کونسل کے چیرمین اور حزب المجاہدین کے امیر سید صلاح الدین نے امریکا کی جانب سے عالمی دہشت گرد قرار دیے جانے کے بعد پہلی بار پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ایک فریڈم فائٹر کو دہشت گرد قراردینا دنیا کا سب سے بڑا جھوٹ ہے جسے ہم مسترد کرتے ہیں جب کہ امریکا نے بھارت کو مطمئن کرنے کے لیے مجھے دہشت گرد قرار دیا اور یہ پاکستان دشمنی میں کیا گیا امریکا، اسرائیل اور بھارت کا مشترکہ اقدام ہے تاہم اس اقدام سے مقبوضہ کشمیر میں ہماری جدوجہد پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

کشمیری حریت پسند رہنما کا کہنا تھا کہ کشمیریوں کی آزادی کی جدوجہد کو 1947 سے ہی تسلیم کرلیا گیا تھا جب کہ ہماری حالیہ  جدوجہد اقوام متحدہ کے قوانین کے مطابق ہے لہذا ہم دہشت گرد نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ امریکا کسی ایک مثال سے بھی یہ ثابت نہیں کرسکتا کہ میرے ساتھیوں یا میں نے کسی قسم کی دہشت گردی کا قدم اٹھایا ہو جب کہ ایسی بے پناہ مثالیں موجود ہیں جب بھارتی فوجیوں نے کشمیری فریڈم فائٹرز کے سامنے ہتھیار ڈالے اور انہیں قتل نہیں کیا گیا۔

حزب المجاہدین کے امیر کا کہنا تھا کہ آزادی کے لیے لڑنے والے کشمیری معصوم ہیں اور اگر امریکا کسی کو دہشت گرد قرار دینا چاہتا ہے تو اسے چاہیے وہ بھارتی فوجیوں کو دہشت گرد قرار دے جو مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں میں ملوث ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی وزیراعظم کے ہاتھ 2 ہزار مسلمانوں کے خون سے رنگے ہیں جب کہ مودی کی امریکا میں داخل ہونے پر بھی پابندی تھی مگر گجرات کے قصائی کے لیے واشنگٹن میں ریڈ کارپٹ بچھانے پر دنیا حیران ہے ۔

سید صلاح الدین کا کہنا تھا کہ بھارت پاکستان کو کمزور کرنے اورنقصان پہنچانے کے لیے شدت پسند تنظیم داعش اور کالعدم تحریک طالبان پاکستان کی معاونت کررہا ہے جب کہ یہ دونوں تنظیمیں ٹرمپ کی ایجنٹ ہیں اور ہم ان کے تمام اقدامات کی شدید مذمت کرتے ہیں۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ ہمارے پاس ایسے بے پناہ مواقع موجود تھے جب ہم بھارت کے اندر سے ہی حملے کرواسکتے تھے لیکن ہم نے ایسا نہیں کیا کیوں کہ اس سے  بھارت کو کشمیری فریڈم فائٹرز کو غلط ثابت کرنے کا موقع مل جاتا۔

حزب المجاہدین کے امیر نے کہا کہ امریکا دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے کردار کو سراہنے کے بجائے ہمیشہ ڈو مور کا مطالبہ کرتا رہا ہے جب کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے فرنٹ لائن کے کردار کو فراموش کرتے ہوئے امریکا نے بھارت کے ساتھ F-16 جیٹس ٹیکنالوجی کا معاہدہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ امریکا نے نیوکلیئر پروگرام بند کرنے کیلیے پاکستان پر دباو ڈالا لیکن بھارت کے ساتھ نیوکلیئر معاہدہ کیا۔

واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھارتی وزیراعظم مودی سے ملاقات کے  بعد کشمیری حریت پسند رہنما سید صلاح الدین کو عالمی دہشت گرد قرار دیتے ہوئے ان پر پابندیاں عائد کردی تھیں۔

    تازہ ترین خبریں