ڈونلڈ ٹرمپ پاکستان کی دہری پالیسی میں تبدیلی کے خواہاں، مک ماسٹر

خبر کا کوڈ: 1484413 خدمت: دنیا
مک ماستر

امریکی قومی سلامتی کے مشیر جنرل ایچ آر مک ماسٹر کا کہنا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ چاہتے ہیں کہ پاکستان عسکریت پسندوں کی مبینہ مدد کی اپنی دہری پالیسی تبدیل کرے، جس سے ملک کو نقصان پہنچ رہا ہے۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق امریکی ریڈیو کو انٹرویو دیتے ہوئے جنرل مک ماسٹر نے ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسی کا دفاع کیا جس کے تحت افغانستان میں جنگ جیتنے کے لیے امریکی افواج کو لا محدود اختیارات دے دیے گئے ہیں۔

امریکی حکام ماضی میں بھی پاکستان پر عسکریت پسندوں کی مبینہ مدد کا الزام لگاتے رہے ہیں جس کی پاکستان نے ہمیشہ تردید کی تاہم یہ پہلی مرتبہ ہے کہ یہ الزام امریکی صدر سے منسوب کیا گیا۔

ڈان نیوز کے مطابق مک ماسٹر کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکی صدر نے واضح کیا کہ ہمیں خطے میں رویے کی تبدیلی دیکھنے کی ضرورت ہے جس میں وہ ممالک بھی شامل ہے جو طالبان، حقانی نیٹ ورک اور دیگر تنظیموں کو محفوظ پناہ گاہیں مہیا کرتے ہیں۔

انہوں نے واضح کیا کہ یہ پاکستان ہے جس کے رویے میں ہم تبدیلی اور مذکورہ گرپوں کی مدد میں کمی دیکھنا چاہتے ہیں۔

امریکی قومی سلامتی کے مشیر نے الزام لگایا کہ ’پاکستان میں دہری پالیسی عمل پیرا ہے جس سے اسے شدید نقصان ہوا، پاکستان نے ان گروپوں کے خلاف سخت سے سخت کارروائیاں کی لیکن وہ مخصوص سمت میں تھیں‘۔

افغانستان میں ’جنگ جیتنے‘ کے حوالے سے امریکی صدر کے فیصلے پر تبصرہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ امریکی صدر کا کہا تھا کہ وہ افغانستان میں موجود امریکی فوجیوں پر پابندیاں عائد نہیں کرنا چاہتے جو میدان جنگ میں امریکا کی اہلیت پر اثر انداز ہو، اسی لیے انہوں نے تمام پابندیاں ختم کردیں جس کے مثبت اثرات جلد نظر آنا شروع ہوجائیں گے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری