شام لبنان مشترکہ سرحدوں سے داعش کا خاتمہ حزب اللہ کی اولین ترجیح

خبر کا کوڈ: 1501233 خدمت: اسلامی بیداری
سید حسن نصرالله

حزب اللہ لبنان کے سیکرٹری جنرل نے کہا ہے کہ لبنان اور شام کی مشترکہ سرحدوں پر جاری آپریشن کا اصل مقصد ان علاقوں سے داعشی اور تکفیری عناصر کو مار بھگانا ہے.

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق حزب اللہ لبنان کے سیکرٹری جنرل سید حسن نصراللہ نے لبنانی ٹی وی چینل المنار سے براہ راست نشر ہونے والے اپنے خطاب میں کہا کہ شام کیساتھ مشترکہ سرحدوں سے داعش کا خاتمہ حزب اللہ کی اولین ترجیحات میں سے ہے۔

حزب اللہ لبنان کے سربراہ نے عرسال میں وہابی دہشت گرد تنظیم داعش کے خلاف فوجی آپریشن کو نہایت اہم قرار دیتے ہوئے کہا کہ عرسال میں فوجی آپریشن کا مقصد لبنان کو کامل تحفظ اور سیکورٹی فراہم کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مشترکہ سرحدوں میں دہشتگردوں کے خلاف کامیاب آپریشن میں شامل شامی افواج، لبنانی فوج اور حزب اللہ کے مجاہدین کی جد و جہد کو سراہتے ہوئے ان کو سلام پیش کرتے ہیں۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ شام اور لبنان کی سرحدوں سے دہشتگردوں کا مکمل قلع قمع ہونے تک آپریشن جاری رہے گا۔

سید حسن نصراللہ نے کہا کہ آپریشن کے چھ دن گزرنے کے بعد اہم کامیابیاں حاصل ہوئیں اور اس دوران لبنانی آرمی نے 100 کلومیٹر اور حزب اللہ نے 20 کلومیٹر کے علاقوں کو داعش کے دہشتگردوں سے آزاد کرایا۔

انہوں نے کہا کہ داعش نے شام اور لبنان کی سرحدوں علاقوں کو مل کر 330 کلومیٹر پر قبضہ کرلیا تھا مگر اس وقت داعش کے دہشتگرد 60 کلومیٹر کی محیط میں دونوں ممالک کی سیکورٹی فورسز کے گھیرے میں ہیں۔

حزب اللہ کے سربراہ نے کہا کہ دہشتگردوں کے خلاف آپریشن کو منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا جس کے بعد بہت جلد فتح کا جشن بھی منائیں گے۔

انھوں نے کہا جرود عرسال کی جنگ فیصلہ کن جنگ ہے جس میں لبنانی ، شامی افواج اور اسلامی مزاحمت کی کامیابی یقینی ہے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری