کراچی؛ ایم ڈبلیو ایم کے زیر اہتمام آل شیعہ پارٹیز کانفرنس کا انعقاد + تصاویر

خبر کا کوڈ: 1520093 خدمت: پاکستان
آل شیعہ پارٹیز کانفرنس1

ایم ڈبلیو ایم کے رہنما کا کہنا ہے کہ محرم الحرام کی آمد کے موقع پر مسائل حل کرنے کے بجائے سندھ وشہری حکومتیں مجرمانہ غفلت کا مظاہرہ کر رہی ہیں۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق مجلس وحدت مسلمین کراچی ڈویژن کے زیر اہتمام مرکزی ڈپٹی سیکریٹری جنرل علامہ حسن ظفر نقوی کی زیر صدارت آل شیعہ پارٹیز کانفرنس کا انعقاد وحدت سیکریٹریٹ، سولجر بازار میں کیا گیا۔

علامہ حسن ظفر نقوی نے علمائے کرام و شیعہ تنظیموں کے رہنماوں کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ محرم الحرام کی آمد کے موقع پر سندھ حکومت اور شہری انتظامیہ شدید مجرمانہ غفلت کا مظاہرہ کر رہی ہے، شہر بھر میں جلوس ہائے عزا کے راستوں میں اور امام بارگاہوں و مساجد کے اطراف گندگی، کچرے کا ڈھیر لگا ہوا ہے، سندھ حکومت اور شہری انتظامیہ عوام کو بے وقوف بنانے کے بجائے اپنا قبلہ درست کریں اور مسائل حل کریں، محرم الحرام کی مناسبت سے منعقدہ صوبائی و شہری انتظامیہ کے اجلاسوں میں ملت جعفریہ کی نمائندہ تنظیموں کو مدعو نہ کرنا اور کالعدم دہشتگرد تنظیموں کو دعوت دینا انتہائی تشویشناک و قابل مذمت ہے۔

محرم الحرام میں کراچی سمیت سندھ بھر میں شیعہ علما و ذاکرین کو خصوصی طور پر بھرپور سیکیورٹی فراہم کی جائے،دہشتگردوں کی عدالتوں سے رہائی اور بے گناہ شیعہ جوانوں کو لاپتہ کرنا انتہائی تشویش ناک ہے، دہشتگرد عناصر اور محب وطن ملت تشیع کو ایک ہی لاٹھی سے ہانکنا اور دیوار سے لگانے کا سلسلہ بند کیا جائے۔

کانفرنس میں علامہ حسن ظفر نقوی، علامہ شیخ حسن صلاح الدین، سید علی حسین نقوی سیکریٹری سیاسیات ایم ڈبلیو ایم سندھ، علامہ نثار قلندری صدر ذاکرین امامیہ پاکستان، صغیر عابد رضوی مرکزی رہنما آل پاکستان شیعہ ایکشن کمیٹی، حسین مسعودی نائب صدر جعفریہ الائنس، علامہ فرقان عابدی، علامہ سجاد شبیری، علی سرور جنرل سیکریٹری پاک محرم ایسوسی ایشن، حسن سردار اسکاوٹس رابطہ کونسل، حسن مہدی بوتراب اسکاو ٹس، سہیل مرزا، رضی حیدر رضوی، علامہ نشان حیدر ساجدی، علامہ صادق جعفری، علامہ علی انور،علامہ مبشر حسن، اسلم رہنما پیام ولایت فاونڈیشن، راشد رضوی رہنما پاسبان عزا پاکستان دیگر شیعہ تنظیموں اور اداروں کے رہنما، مساجد و امام بارگاہوں کے ٹرسٹیز، علمائے کرام و ذاکرین عظام شریک تھے۔

علامہ حسن ظفر نقوی نے کہا کہ کراچی بھر میں جلوس عزاء کی گزر گاہوں اور امام بارگاہوں و مساجد کے اطراف سیوریج کا گندا پانی کھڑا ہے، گندگی کا ڈھیر لگا ہوا ہے، لائٹس کا مناسب انتظام نہیں ہے، گڑھوں کی بھرمارہے، سڑکوں کی استر کاری کا مسئلہ تاحال برقرار ہے، بدترین صورتحال سندھ حکومت و شہری انتظامیہ کی نااہلی و غفلت کامنہ بولتا ثبوت ہے۔

انہوں نے کہا کہ صوبائی و شہری حکومتیں ملت تشیع کو مسائل کے حل کے حوالے سے لالی پوپ دینا بند کریں، محرم الحرام کی آمد کے موقع پر مسائل کے حل کے حوالے سے حکومتی و انتظامی ادارے شدید غفلت کا مظاہرہ کر رہے ہیں،سندھ حکومت اور شہری حکومت مل کر عوام کو بے وقوف بنا رہے ہیں، صوبائی و شہری حکومتیں ایک دوسرے پر الزام تراشیاں کرنے کے بجائے قبلہ درست کریں اور عوامی مسائل حل کریں، اگر سندھ حکومت اور شہری انتظامیہ مسائل حل نہیں کر سکتے تو اربوں کھربوں روپے کا بجٹ ہڑپ کرنے کے بجائے مستعفی ہونے کا اعلان کریں۔ انہوں نے کہا کہ محرم الحرام کی مناسبت سے منعقدہ صوبائی و شہری انتظامیہ کے اجلاسوں میں ملت جعفریہ کی نمائندہ تنظیموں کو مدعو نہ کرنا اور کالعدم دہشتگرد تنظیموں کو دعوت دینا انتہائی تشویشناک و قابل مذمت ہے،انتظامیہ اجلاسوں میں کالعدم دہشتگرد تنظیموں کو بلانا نیشنل ایکشن پلان پر سوالیہ نشان ہے۔

صوبائی و شہری انتظامیہ محرم الحرام کی مناسبت سے اجلاسوں میں ملت جعفریہ کی نمائندہ تنظیموں و شخصیات کو مدعو کریں، تاکہ مسائل کی صحیح طور پر نشاندہی کی جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ محرم الحرام کے حوالے سے صوبائی و شہری حکومتیں تاحال غفلت و نااہلی کا شکار ہیں، صوبائی و شہری حکومتیں محرم الحرام سے قبل انتظامی و سیکیورٹی مسائل کو حل کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ محرم الحرام میں کراچی سمیت سندھ بھر میں شیعہ علما و ذاکرین کو خصوصی طور پر بھرپور سیکیورٹی فراہم کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ کالعدم دہشتگرد تنظیموں کی کھلے عام فعالیت نیشنل ایکشن پلان کے منہ پر طمانچہ ہے، کراچی سمیت سندھ بھر میں کالعدم دہشتگرد تنظیموں کی کھلے عام فعالیت واضح ثبوت ہے کہ حکومتوں اور ریاستی اداروں میں ان کے سہولت کار موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ شیعہ لاپتہ افراد کا معاملہ بے حد تشویشناک ہے ،دہشتگردوں کی عدالتوں سے رہائی اور بے گناہ شیعہ جوانوں کو لاپتہ کرنا انتہائی بے حد شر مناک فعل ہے، کسی شیعہ جوان پر کوئی الزام ہے تو اسے لاپتہ کرنے کے بجائے ثبوت کے ساتھ عدالتوں میں پیش کیا جائے، دہشتگردو عناصر اور محب وطن ملت تشیع کو ایک ہی لاٹھی سے ہانکنا بند کیا جائے، ملت تشیع اپنے بے گناہ لاپتہ و اسیر جوانوں اور ان کے خاندانوں کو تنہا نہیں چھوڑے گی، ملت تشیع کو دیوار سے لگانے کا سلسلہ بند کیا جائے، ورنہ سڑکوں پر آنے کیلئے مجبور ہونگے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری