محرم کی آمد اور سندھ حکومت کی بلدیاتی مسائل کے حل میں ناکامی

خبر کا کوڈ: 1527665 خدمت: پاکستان
کراچی گندگی

مجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچی ڈویژن کے رہنماوں نے کہا ہے کہ محرم الحرام کے آغاز ہوچکا لیکن سندھ حکومت کو بارہا متوجہ کرنے کے باوجود جلوس عزا کی گزرگاہوں اور امام بارگاہوں و مساجد کے اطراف کچرے، گندگی کے ڈھیر، سیوریج کے پانی کی موجودگی جیسے مسائل تاحال حل نہیں کئے جا سکے ہیں۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق مجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچی ڈویژن کے سیکریٹری جنرل سید میثم رضا عابدی و دیگر رہنماوں نے کہا ہے کہ محرم الحرام کے آغاز ہوچکا لیکن سندھ حکومت اور شہری انتظامیہ بلدیاتی مسائل کے حل میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے، بارہا متوجہ کرنے کے باوجود کراچی بھر میں جلوس عزا کی گزرگاہوں اور امام بارگاہوں و مساجد کے اطراف کچرے، گندگی کے ڈھیر، سیوریج کے پانی کی موجودگی، ٹوٹی ہوئی سڑکیں، گڑھوں کی بھرمار جیسے مسائل تاحال حل نہیں کئے جا سکے۔

کراچی سمیت سندھ بھر میں کالعدم دہشتگرد تنظیموں کی سرگرمیاں کھلے عام جاری ہیں، جسے روکنے کے بجائے صوبائی حکومت عزاداری و عزاداروں کیخلاف پرمٹ، لاوڈ اسپیکر ایکٹ سمیت مختلف حیلے بہانوں سے سازشیں کر رہی ہے، دہشتگرد عناصر کو لگام ڈالنے کے بجائے محب وطن شیعہ علمائے کرام کو مجالس پڑھنے سے روکا جا رہا ہے۔

سندھ حکومت کی جانب سے عزاداری کے انعقاد میں رکاوٹ پیدا کرنا دراصل کالعدم تنظیموں اور دہشتگرد عناصر کی سہولت کاری کے مترادف ہے۔

ان خیالات کا اظہار رہنماوں نے وحدت ہاوس کراچی میں محرم الحرام کے حوالے سے منعقدہ ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر علامہ مبشر حسن، علامہ صادق جعفری، علامہ علی انور،علامہ اظہر نقوی، علامہ سجاد شبیر رضوی، علامہ احسان دانش، میر تقی ظفر و دیگر رہنما بھی موجود تھے۔

کابینہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے رہنماوں نے کہا کہ محرم الحرام سے قبل بلدیاتی مسائل حل نہ کرنا سندھ حکومت و شہری انتظامیہ کی نااہلی و مجرمانہ غفلت کا منہ بولتا ثبوت ہے، جنہوںنے محرم الحرام کے پیش نظر بلدیاتی مسائل حل کرنے کے بجائے اپنی تمام تر توجہ ایک دوسرے کے کاندھوں پر ذمہ داریاں ڈالنے پر رکھی۔

انہوں نے کہاکہ محرم الحرام کے آغاز کے باوجود بلدیاتی مسائل کے حل میں ناکام سندھ حکومت اور شہری انتظامیہ کی ناقص ترین کاکردگی کا پول کھول دیا ہے، جس پر پردہ ڈالنے کیلئے صوبائی حکومت نے عزاداری کے انعقاد میں پرمٹ، این او سی، لاوڈ اسپیکر ایکٹ سمیت دیگر حیلے بہانوں سے رکاوٹیں پیدا کرنے کیلئے سازشیں شروع کر دی ہیں، تاکہ محب وطن پرامن ملت تشیع کو الجھا کر اپنی ناقص کارکردگی پر پردہ ڈالا جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت ہوش کے ناخن لے اور عزاداری کے انعقاد میں رکاوٹیں پیدا کرنے سے باز رہے، پرامن ملت تشیع حکومت کیجانب سے عزاداری میں بے جا مداخلت کسی صورت برداشت نہیں کرے گی، عزاداری میں رکاوٹیں ڈال کر سندھ حکومت کالعدم تنظیموں اور دہشتگرد عناصر کی سہولت کار بننے سے گریز کرے۔

انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت عزاداری میں رکاوٹ ڈالنے کے بجائے کراچی سمیت سندھ بھر کی حساس صورتحال کے باوجود کھلے عام فعال کالعدم دہشتگرد تنظیموں اور ان کے سہولت کاروں کیخلاف موثر حکمت عملی کے تحت فوری کارروائی کرے، تاکہ شہر قائد سمیت صوبے بھر میں محرم الحرام میں قائم پُرامن فضاءکو سبوتاژ ہونے سے بچایا جا سکے، اس کے ساتھ ساتھ کراچی سمیت سندھ بھر میں شیعہ علماءکرام پر پابندی عائد کرنے کے بجائے انہیں فول پروف سکیورٹی فراہم کرے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری