محمد جواد ظریف:

ایران کے پاس ایٹمی معاہدے سے نکلنے کے بعد جوہری پروگرام کو مزید تیزی کیساتھ جاری رکھنے کا آپشن موجود ہے

خبر کا کوڈ: 1528815 خدمت: ایران
ظریف

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ایران کے پاس جوہری معاہدے سے نکلنے اور پر امن مقاصد کیلئے جوہری پروگرام کی سمت واپس جانے سمیت کئی آپشن موجود ہیں۔

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق ایران کے وزیر خارجہ نے امریکی ٹیلی ویژن چینل سی این این کو انٹرویو دیتے ہوئے امریکہ کی جانب سے ممکنہ طور پر جوہری معاہدے سے نکلنے پر رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایران کے پاس جوہری معاہدے سے نکلنے اور پر امن مقاصد کیلئے جوہری پروگرام کی سمت واپس جانے سمیت کئی آپشن موجود ہیں۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نےامریکی ٹیلی ویژن چینل سی این این  کے اینکر پرسن فرید زکریا کو انٹرویو دیتے ہوئے ان کے اس سوال کے جواب میں کہ امریکہ کی جانب سے ممکنہ طور پر جوہری معاہدے سے نکلنے پر ایران کا کیا رد عمل ہو گا کہا کہ اس صورت میں ایران کے پاس متعدد آپشن موجود ہیں کہ جن میں سےجوہری معاہدے سے نکلنے اورپر امن مقاصد کے حصول کیلئے جوہری پروگرام کی سمت واپس بھی شامل ہے۔

ایران کے وزیر خارجہ نے  سعودی عرب کی جانب سے  چند ماہ قبل امریکی صدر کے دورہ سعودی عرب کے موقع پر بڑے پیمانے پر ہتھیار خریدنے کی جانب اشارہ کرتے ہوئے ایران کی دفاعی ضروریات کے بارے میں کہا کہ ایران اپنی فوجی اور میزائلی ضروریات اور سازوسامان خود بناتا ہے اور اسی وجہ سے یورپ اور امریکہ سیخ پا ہو رہے ہیں۔

محمد جواد ظریف نے سی این این کے صحافی کے اس سوال کے جواب میں کہ ایران امریکی صدر کو کیا پیغام دینا چاہتا ہے کہا کہ میرے خیال میں یہ امریکی صدر ٹرمپ کیلئے بہتر ہو گا کہ وہ حقائق کو جاننے، سمجھنے اور اس پر توجہ دینے کی کوشش کرے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری