ترکی کا امریکہ کو منہ توڑ جواب؛ ڈی8 ممالک مقامی کرنسی میں باہمی تجارت کریں

خبر کا کوڈ: 1551938 خدمت: دنیا
اردوغان

ترک صدر رجب طیب اردگان نے خطے میں امریکی بدمعاشی کا دو ٹوک جواب دیتے ہوئے پاکستان سمیت ڈی 8سمٹ میں شامل ممالک کو مقامی کرنسی میں تجارت کرنے کی پیشکش کردی۔

خبر رساں دارے تسنیم نے ترک میڈیا کے حوالے سے بتایا ہے کہ  استنبول میں منعقدہ ڈی 8سمٹ کے افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے طیب اردگان نے تنظیم میں شامل رکن ممالک پر زور دیا کہ ڈالرز سے جان چھڑا کر مقامی کرنسی میں لین دین کو فروغ دیا جائے۔  مقامی کرنسی میں تجارت کو ترجیح دے کر تعلقات کو نئی بلندیوں تک پہنچایا جاسکتا ہے۔

انہوں نے تجویز دی کہ بنگلا دیش، مصر، انڈونیشیاء، ایران ، ملائیشیاء، نائجیریا، پاکستان اور ترکی پر مشتمل ڈی 8گروپ کو آپس میں تجارت مقامی کرنسی میں کرنے چاہیے اور ایسا کرنےسے معیشت پر کوئی منفی اثرات نہیں ہوں گے۔

ترک صدر نے کہا کہ اگر ڈی 8کے رکن ممالک  مقامی کرنسی میں تجارت کا راستہ اپنائیں تو یہ تنظیم کی مضبوطی کے لیے تاریخی اقدام اور تعلقات کو مستحکم کرنے میں سنگ میل ثابت ہوگا۔ڈی 8مقامی کرنسی کے تبادلے کا مفید اور ایک دوسرے کے لیے سہولیات کی فراہمی کا قابل اعتبار فورم ہے۔

ترک صدر نے رکن ممالک پر زور دیا کہ وہ ڈی 8کی اہمیت کو مدنظر رکھتےہوئے تنظیم کے اجلاسوں میں اپنی نمائندگی کو بڑھائیں تاکہ اس فورم  کی ترقی  کے لیے مشترکہ   جدوجہد اور بہترین حکمت عملی کے ذریعے اپنے مقاصد کو حصول ممکن بنایا جاسکے۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری