امریکہ کی افغان طالبان کو کمزور کرنے کی پاکستان سے مخصوص درخواستیں/ خود امریکہ افغانستان میں کیا کررہا ہے؟

خبر کا کوڈ: 1554452 خدمت: دنیا
تلرسون

امریکی وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان سے طالبان کو کمزور کرنے کے لیے کچھ مخصوص درخواستیں کیں ہیں جن پر دورہ اسلام آباد کے دوران بات چیت کی جائے گی لیکن سوال یہ ہے کہ خود کو سپر پاور کہلوانے والا امریکہ 16 سالوں سے افغانستان میں کیا کررہا ہے؟

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق بگرام ایئر بیس پر صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے ریکس ٹلرسن کا کہنا تھا کہ امریکا، جنوبی ایشیا میں دہشت گردی کے خطرے سے بچنے کے لیے اپنے علاقائی اتحادیوں کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ امریکا کی ان ہی کوششوں کو جنوبی ایشیا کے لیے نئی حکمت عملی میں بھی واضح کیا گیا ہے۔

واشنگٹن میں امریکا کے اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق امریکا کے سیکریٹری آف اسٹیٹ نے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’ہم خطے کے دیگر ممالک سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ وہ خطے میں کہیں بھی دہشت گردوں کو محفوظ پناہ گاہیں قائم نہ کرنے دیں جبکہ اس حوالے سے امریکا اعلیٰ سطح پر پاکستان کے ساتھ کام کر رہا ہے‘۔

ایک سوال کے جواب میں ریکس ٹلرسن کا کہنا تھا کہ امریکا نے پاکستان سے طالبان اور دیگر دہشت گرد تنظیموں کو موصول ہونے والی حمایت کے خلاف کارروائی سے متعلق مخصوص درخواستیں کی ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جنوبی ایشیا کے لیے نئی امریکی پالیسی میں تمام چیزیں وضع کردی گئیں، جو شرائط پر مبنی ہیں تاہم پاکستان کے ساتھ تعلقات بھی شرائط پر مبنی ہوں گے جبکہ دونوں ممالک کے تعلقات کا انحصار پاکستان کے امریکا کے ساتھ تعاون پر ہے۔

امریکا کے سیکریٹری آف اسٹیٹ کا کہنا تھا کہ پاکستانی قیادت سے بات چیت کے دوران ہم نے پاکستان کے مستقبل کے حوالے سے اپنے خدشات کا اظہار کیا تھا کیونکہ پاکستان کو اس صورتحال پر نظر رکھنے کی ضرورت ہے جیسا کہ پاکستان میں مبینہ طور پر کئی دہشت گرد تنظیموں کی محفوظ پناہ گاہیں موجود ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ واشنگٹن پاکستان کو زیادہ مستحکم اور محفوظ بنانے کے لیے اسلام آباد کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتا ہے۔

افغانستان میں بھارت کے کردار پر سوال کے جواب میں امریکا کے سیکریٹری آف اسٹیٹ کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے یقینی طور پر اسلام آباد کے دورے پر بات ہوگی۔

افغانستان میں بگرام ایئر بیس پر افغان صدر اشرف غنی، چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ اور دیگر اہم عہدیداران سے ملاقات کی۔

اپنی ملاقات کے دوران ان کا کہنا تھا کہ طالبان کو اس بات کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ وہ کبھی بھی عسکری جنگ نہیں جیت سکتے انہیں اپنے آپ کو حکومت سے مذاکرات کرنے کے لیے تیار کرنا چاہیے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ طالبان کے لیے افغان حکومت میں جگہ موجود ہے لہٰذا اس کے لیے وہ دہشت گردی اور عسکریت پسندی کو تَرک کرکے ترقی یافتہ افغانستان کے لیے تعاون پر تیار ہوجائیں۔

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری