امام خامنہ ای کا عالمی محبان اہل بیت اور مسئلہ تکفیر کانفرنس سے خطاب؛

جہاں کہیں بھی ضرورت پڑی، ایران استکبار سے مقابلہ کرنے کے لئے ضرور پہنچے گا

خبر کا کوڈ: 1582256 خدمت: ایران
امام خامنه‌ای

رہبرمعظم انقلاب حضرت آیت اللہ امام خامنہ ای کا تاکید کیساتھ کہنا تھا کہ جہاں کہیں بھی کفر و استکبار کے خلاف مدد کی ضرورت پڑی، ہم ضرور وہاں پہنچیں گے۔

تسنیم خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق، رہبرمعظم انقلاب حضرت آیت اللہ امام خامنہ ای کا کہنا ہے کہ جہاں کہیں بھی کفر اور استکبار کے خلاف مدد کی ضرورت پڑے، ہم ضرور مدد کریں گے۔

تہران میں تکفیری مسئلہ اور محبان اہلبیت علیہم السلام نامی اجلاس کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے امام خامنہ ای کا کہنا تھا کہ آج کے دور، خاص کر موجودہ حالات میں مسلم امہ کے درمیان اتحاد اور ہمدردی اوجب واجبات میں سے ہے، اسلامی جمہوری ایران نے ہمیشہ صہیونی اور استکباری طاقتوں کی جنگ طلبانہ پالیسیوں کا ڈٹ کر مقابلہ کیا ہے اور آئندہ بھی کرتا رہے گا اور اللہ تعالی کے اذن سے ان تمام استعماری طاقتوں پر فتح ہماری ہی گی جس طرح کہ شجرہ خبیثہ داعش کی جڑوں کو شام اور عراق میں خشک کردیا ہے اسی طرح ان کا بھی خاتمہ ہوگا۔

رہبر معظم نے فرمایا: "اگرچہ عراق اور شام میں داعش کا خاتمہ ہوگیا ہے لیکن ہمیں دشمن کے مکر و فریب سے ہوشیار رہنا ہوگا کیونکہ امریکہ، اسرائیل اور ان کے پیروکار اسلام دشمنی سے باز نہیں آئیں گے، عین ممکن ہے کہ دشمن داعش کی طرح ایک اور سازش کسی اور ملک میں آزمائیں۔"

سپریم لیڈر نے تاکید کرتے ہوئے کہا: "ہمیں محتاط رہنے کی ضرورت ہے اور دشمن کو کبھی بھی نظر انداز نہیں کرنا چاہئے، دشمن کی سازشوں کو ناکام بنانے کےلئے مسلم امہ کے درمیان اتحاد اور ہمدردی کا پرچار نہایت ضروری ہے۔"

امام خامنہ ای نے مزید کہا کہ تمام محبین اہل بیت علیہم السلام پر لازم ہے کہ اسلامی ممالک میں اتحاد اور اتفاق کے لئے کوشش کرتے ہوئے امت کو دشمن کی ناپاک سازشوں سے آگاہی دلاتے رہیں۔ اہلبیت علیہم السلام کی محبت فقط شیعوں کیلئے مختص نہیں ہے جس طرح نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا وجود مبارک مسلمانوں کے لئے اتحاد اور یکجہتی کا سبب ہے اسی طرح اہلبیت علیھم السلام کی محبت بھی مسلمانوں کے درمیان اتحاد اور یکجہتی کا سبب ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ مسلم دنیا کفر اور استکباری طاقتوں کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے اور ایران کا اسلامی جمہوری نظام مکمل طور پر اسلامی شریعت کا نفاذ چاہتا ہے اور یہی نظام دشمنان اسلام پر فتح کا وسیلہ بنے گا۔

رہبرمعظم نے ایران کے خلاف امریکی پابندیوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا: "اسلامی جمہوری ایران نے عالمی طاقتوں کی تمام تر پابندیوں کے باجود اللہ کے فضل و کرم سے بہت ترقی کی ہے اور استعاری طاقتوں کے سامنے پوری طاقت کے ساتھ کھڑا ہے۔

امام خامنہ ای نے کہا: "میں واضح طور پر اعلان کرتا ہوں کہ جہاں کہیں بھی کفر، ظلم اور استکبار کے خلاف ایران کی مدد درکار ہو، ہم ضرور وہاں مدد کریں گے۔"

سپریم لیڈر نے مسئلہ فلسطین کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا: "فلسطین اسلام کے دشمنوں کو شکست دینے کی کنجی ہے، کیونکہ صہیونی اسلامی ملک فلسطین پر غاصبانہ قبضہ کرکے خطے کے دیگر اسلامی ممالک میں بھی مداخلت کررہے ہیں لہذا اس کینسر کا مقابلہ کرنے کی ضرورت ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ ایک دن فلسطینی عوام اپنے وطن کے مالک ہوں گے اور اس دن  پوری اسلامی دنیا میں جشن کا سماں ہوگا۔

رہبر انقلاب اسلامی نے مزید کہا: "جس دن فلسطین آزاد ہوگا اس دن استکبار کی کمر ٹوٹ جائے گی اور ہم اس دن کے لئے کوشش کررہے ہیں۔"

    تازہ ترین خبریں
    خبرنگار افتخاری