امریکہ کو ایک اور دھچکا! ویکی لیکس کے بانی کو شہریت مل گئی

ایکواڈور نے 2010 میں امریکی فوج کی خفیہ معلومات افشاں کرنے والے ویکی لیکس کے بانی جولین اسانج کو شہریت دے دی ہے۔

اسانج

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق ایکواڈور کی وزیر خارجہ ماریہ فرنینڈا اسپنوسا نے کوئٹو میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ویکی لیکس کے بانی جولین اسانج کو شہریت دینے کی تصدیق کی اور کہا کہ جولین اسانج نے شہریت کی درخواست دی تھی اور وہ 12 دسمبر 2017 سے ایکواڈور کے شہری ہیں۔

ماریہ فرنینڈا نے مزید کہا کہ جولین اسانج کو ایک تیسری ریاست سے جان کا خطرہ ہے، ہم نے برطانیہ کے ساتھ ویکی لیکس کے بانی کے معاملے کو باوقار طریقے سے حل کرنے کے لیے جولین اسانج کو ایکواڈور کی شہریت دی۔

ان کا کہنا تھا کہ ویکی لیکس کے بانی کو شہریت دینے کا فیصلہ برطانیہ کی جانب سے جولین اسانج کو سفارتی درجہ دینے کی درخواست مسترد کرنے کے بعد کیا گیا جبکہ جولین اسانج کو سفارتی درجہ دینے کا مقصد انہیں گرفتاری سے استثنیٰ دلانا تھا۔

ادھر جولین اسانج کو خدشہ ہے کہ انہیں گرفتار کر کے امریکا کے حوالے کر دیا جائے گا، جہاں ان سے 2010 میں امریکی فوج کی خفیہ معلومات افشا کرنے کے حوالے سے تحقیقات کی جائیں گی۔

خیال رہے کہ جولین اسانج نے 2012 سے برطانیہ میں ایکواڈور کے سفارتخانے میں سیاسی پناہ لے رکھی ہے۔

سب سے زیادہ دیکھی گئی دنیا خبریں
اہم ترین دنیا خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری