عید پر شہادتوں، چھاپوں اور گرفتاریوں کیخلاف مزاحمتی قیادت کی طرف سے ہڑتال کی اپیل

مقبوضہ کشمیر میں مشترکہ مزاحمتی قیادت نے وادی میں گزشتہ کچھ دنوں سے بھارتی فورسز کے ہاتھوں مسلسل شہادتوں بالخصوص صحافی، ادیب اور تجزیہ کار کے بہیمانہ قتل کیخلاف کل 21 جون کو ہمہ گیر احتجاجی ہڑتال کا اعلان کیا ہے۔

عید پر شہادتوں، چھاپوں اور گرفتاریوں کیخلاف مزاحمتی قیادت کی طرف سے ہڑتال کی اپیل

خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں مشترکہ مزاحمتی قیادت نے وادی میں گزشتہ کچھ دنوں سے بھارتی فورسز کے ہاتھوں مسلسل شہادتوں بالخصوص صحافی، ادیب اور تجزیہ کار کے بہیمانہ قتل کیخلاف کل 21 جون کو ہمہ گیر احتجاجی ہڑتال کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ عید الفطر کے روز سے ہی وادی میں بھارتی فورسز نے ایک بار پھر ظلم و جبر کا بازار گرم کرکے براہ راست فائرنگ کرکے تین نہتے کشمیری نوجوانوں کو پیلٹ اور بلٹ کے ذریعے موت کے گھاٹ اتار دیا اور یہ شہادتیں اس وقت عمل میں لائی گئیں جب نہتے مظاہرین پر بھارتی فورسز نے بے دریغ گولیاں برسا کر درجنوں افراد کو شدید زخمی کر دیا۔

قائدین نے کہا کہ نام نہاد سیز فائر کے اختتام کے ساتھ ہی حکمرانوں نے بدنام زمانہ CASO کے تحت وادی کے مختلف علاقوں خصوصاً جنوبی کشمیر میں نہتے عوام کو تختہ مشق بنایا جبکہ اس دوران پانپور میں 4 شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کیا گیا اور گزشتہ رات پلوامہ کے مختلف علاقوں میں 14 نوجوانوں کو زبردستی اپنے گھروں سے گرفتار کرلیا گیا جبکہ اس دوران کئی گھروں سمیت سینئر صحافی سید تجمل عمران ساکن شوپیاں کے گھر پر چھاپے ڈالے گئے اور یہ مذموم سلسلہ ہنوز جاری ہے۔

قائدین نے نہتے عوام کیخلاف بھارتی فورسز کی اس شدید جارحیت اور بے رحمانہ پالیسیوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ طاقت اور تشدد کا بے تحاشا استعمال یہاںکے عوام کے جذبہ مزاحمت کو توڑنے میں ہمیشہ ناکام ثابت ہوا ہے اور اس طرح کی جارحانہ پالیسی کسی بھی طور مسئلہ کو حل کرنے میں معاون ثابت نہیں ہوسکتی۔

قائدین نے شہید بخاری کی شہادت کی عالمی سطح پر کسی آزاد ادارے کے ذریعے تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے رواں تحریک مزاحمت کے دوران کشمیر کی صحافتی برادری کی خدمات کو ناقابل فراموش قرار دیتے ہوئے کہا کہ مشکل حالات میں صحافت کے پیشے سے وابستہ افراد نے گزشتہ کئی دہائیوں کے دوران اپنی پیشہ ورانہ خدمات کو نہ صرف جاری رکھا بلکہ کشمیری عوام پر ہو رہے مظالم اور یہاں کے عوام کی جائز آواز کو باہر کی دنیا تک پہنچانے کیلئے بھی ایک گرانقدر کردار ادا کیا۔

سب سے زیادہ دیکھی گئی اسلامی بیداری خبریں
اہم ترین اسلامی بیداری خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری