دانشگاہ کشمیر؛ سیمنار بعنوان "ہند و ایران فارسی ادب میں اخلاقی عناصر" کا اختتام + تصاویر

کشمیر یونیورسٹی میں شعبہ فارسی کے زیر اہتمام سے تین روزہ بین الاقوامی سیمینار اختتام پذیر ہوا جس میں 120 ملکی و غیر ملکی دانشوروں، اسکالروں اور زبان و ادبیات سے وابسطہ شخصیات نے شرکت کرکے تحقیقی مقالے پیش کئے۔

دانشگاہ کشمیر؛ سیمنار بعنوان "ہند و ایران فارسی ادب میں اخلاقی عناصر" کا اختتام + تصاویر

خبر رساں ادارے تسنیم کے نمائندے مجتبٰی علی نے رپورٹ دی ہے کہ کشمیر یونیورسٹی کے ابن الخلدون آدیٹوریم میں "ہند و ایران فارسی ادب میں اخلاقی عناصر" کے عنوان سے تین روزہ بین الاقوامی سیمنار کا انعقاد ہوا جس کا افتتاح کشمیر یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر خورشید اقبال اندرابی نے کیا جبکہ پروفیسر اندرابی کے علاوہ ہندوستان، افغانستان، ایران، پاکستان اور قزاقستا کے نامور اسکالروں، دانشوروں اور ادبیات سے وابستہ عظیم شخصیات نے شرکت کرکےتحقیقی مقالے پیش کئے۔

تقریب کا آغاز تلاوت کلام پاک سے ہوا جس کی سعادت ڈاکٹر حافظ شاہنواز شاہ کو حاصل ہوئی۔

شعبہ فارسی دانشگاہ کشمیر کے سربراہ ڈاکٹر جہانگیر اقبال تانترے نے خطبہ استقبالیہ پیش کیا جبکہ ڈاکٹر شاداب ارشد نے مہمانوں کو گلدستے اور کشمیری شال پیش کئے۔  

پروفیسر شریف حسین قاسمی، پروفیسر محمد منور مسعودی، پروفیسر عبدالخالق رشید اور پروفیسر عارف ایوبی نے بھی افتتاحی مجلس میں سیمینار کی مناسبت سے اظہار خیال کیا وہیں پروفیسر خورشید اقبال اندرابی، پروفیسر محمد زمان آزردہ اور جمہوری اسلامی ایران کے نامور قلمکار، ادیب و ماہر تعلیم علی رضا قزوہ نے اپنے اپنے لیکچروں میں اخلاق اور فارسی ادبیات کے حوالے سے مدلل لیکچر دئے۔

مقررین نے ریاست کے تعلیمی نظام میں اخلاقیات کے فقدان پر شدید تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس بحران کا حل فارسی زبان و ادبیات میں مضمر ہے۔

تین روزہ بین الاقوامی سیمنار میں مقررین نے فارسی زبان و ادبیات کے تئیں انتظامیہ کی بے حسی پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ فارسی زبان میں ایک عظیم سرمایہ موجود ہے جو اخلاقی بحران کے خاتمے کیلئے کارگر ثابت ہوسکتا ہے۔

شعبہ فارسی کے سربراہ ڈاکٹر جہانگیر اقبال کھانڈے نے کہا کہ فارسی زبان و ادبیات میں اخلاق کے ذخائر موجود ہیں جنہیں بروئے کار لاکر اخلاقیات کا دائرہ وسیع کیا جاسکتا ہے۔

ڈاکٹر اقبال نے کہا کہ وہ اس طرح کے سیمینار یاست بھر کے کالجوں میں منعقد کروائیں گے اور ریاست میں فارسی زبان و ادبیات کی ترویج کیلئے تمام تر اقدامات اٹھائیں گے۔

ڈاکٹر جہانگیر صاحب نے اس بات پر خوشی کا اظہار کیا کہ وادی میں فارسی زبان و ادبیات کے ساتھ دلچسپی رکھنے والوں نوجوان اسکالروں کی ایک بڑی تعداد موجود ہے جو فارسی زبان کی ترویج کیلئے فعال ہیں ڈاکٹر جہانگیر اقبال نے تین روزہ بین الاقوامی سیمنار میں شرکت کرنے والے تمام طالبعلموں اسکالروں دانشوروں پروفیسر صاحبان اور مہمانان گرامی کا شکریہ ادا کیا اور اس سیمنار کو احسن طریقے سے انجام دینے میں تعاون کرنے والے تمام افراد اور اداروں کا شکریہ ادا کیا۔

سب سے زیادہ دیکھی گئی دنیا خبریں
اہم ترین دنیا خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری