گلگت بلتستان: سپریم کورٹ کا فیصلہ مسترد، مشترکہ احتجاجی تحریک کا آغاز + ویڈیو

گلگت بلتستان کی تمام سیاسی جماعتوں اور سول سوسائٹی کی تنظیموں نے سپریم کورٹ آف پاکستان کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے مشترکہ احتجاجی تحریک کا اعلان کردیا۔

گلگت بلتستان: سپریم کورٹ کا فیصلہ مسترد، مشترکہ احتجاجی تحریک کا آغاز + ویڈیو

تسنیم خبررساں ادارے کے مطابق، گلگت بلتستان کے دوسرے بڑے شہراسکردو میں مختلف تنظیموں سے تعلق رکھنے والے  مظاہرین یادگار شہدا پر جمع ہوئے اور گلگت بلتستان کے عوام کو آئینی حقوق سے محروم کرنے پر وفاقی اور گلگت بلتستان حکومت کے خلاف نعرے بازی کی۔

مظاہرین نے سپریم کورٹ آف پاکستان کے گلگت بلتستان کی حیثیت سے متعلق فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اگر اس علاقے کو پاکستان کا حصہ قرار نہیں دیا جاسکتا تو اسے اندرونی خود مختاری دی جائے۔

انہوں نے کہا کہ مستقل حیثیت کے تعین کے بغیر گلگت بلتستان کی حکمرانی کے لیے کسی بھی طرح کے انتظامی حکم کی مخالفت کی جائے گی۔

اس سے قبل اسکردو میں گلگت بلتستان یوتھ الائنس کے رہنما شیخ حسن جوہاری کو مبینہ طور پر نفرت پھیلانے پر گرفتار کرلیا گیا تھا۔

ان کی گرفتاری پر مظاہرین کا کہنا تھا کہ لوگوں کی توجہ اپنے حقوق کے مطالبے سے ہٹانے کے لیے شیخ حسن جوہاری کو گرفتار کیا گیا۔

احتجاجی مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے غلام محمد، شہزاد آغا اور محمد علی دلشاد کا کہنا تھا کہ مقامی انتظامیہ امن و امان کی صورتحال خراب کررہی ہے، یہاں کے لوگوں کو غداروں کے طور پر پیش کیا گیا جبکہ وہ پاکستان کے وفادار شہری تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ مشترکہ حکمت عملی کے آغاز پر اتفاق رائے کے لیے اسلام آباد میں کثیر جماعتی کانفرنس منعقد کی گئی تھی۔

اس کانفرنس میں گلگت بلتستان کے اپوزیشن لیڈر کیپٹن (ر) شفیع خان، سابق چیئرمین عوامی ایکشن کمیٹی سلطان رئیس، آغا رضوی، گلگت بلتستان اسمبلی کی سابق رکن آمنہ انصاری، سپریم اپیلیٹ کورٹ کے ریٹائر جج سید جعفر شاہ، ایڈووکیٹ احسان علی، محمد یار، محمد سمیع، قراقرم نیشنل موومنٹ کے رہنما جاوید حسین، چیئرمین گلگت بلتستان سپریم کونسل ڈاکٹر غلام عباس، سیاسی، سول، اور سماجی رہنماؤں نے شرکت کی۔

بعد ازاں ایک اعلامیے میں بتایا گیا تھا کہ کانفرنس میں گلگت بلتستان کے عوام کے حقوق کے لیے مشترکہ تحریک شروع کرنے پر اتفاق کیا گیا۔

اس کے علاوہ کانفرنس نے متفقہ طور پر سپریم کورٹ آف پاکستان کے فیصلے کو مسترد کیا اور کہا کہ عدالت عظمیٰ کے حالیہ فیصلے نے الجھن کو دور کردیا، اب گلگت بلتستان ایک متنازع علاقہ ہے اور اس کے عوام کے حقوق کو یقینی بنانا چاہیے۔

اعلامیے میں کہا گیا کہ گلگت بلتستان اسمبلی کو ریاست کے 3 بنیادی معاملات، خارجی امور، کرنسی اور دفاع کے علاوہ تمام معاملات سے نمٹنے کے لیے بااختیار کرنا چاہیے۔

رپورٹر ھاشم دولتی

 

 

سب سے زیادہ دیکھی گئی پاکستان خبریں
اہم ترین پاکستان خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری