دنیا تسلیم کررہی ہے مقبوضہ کشمیر اور بھارت میں فاشسٹ نظریہ مسلط کیا جارہا ہے، عمران خان

پاکستانی وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ دنیا اب برملا تسلیم کررہی ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر اور بھارت میں غیر جمہوری اور فاشسٹ نظریہ مسلط کیا جارہا ہے۔

دنیا تسلیم کررہی ہے مقبوضہ کشمیر اور بھارت میں فاشسٹ نظریہ مسلط کیا جارہا ہے، عمران خان

سماجی رابطےکی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کیے گئے ٹوئٹ میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ یہ نظریہ خطے کی سلامتی اور امن کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے۔

انہوں نے کہا کہا کہ 80 لاکھ کشمیری اور بھارت میں بسنے والے مسلمان پہلے ہی مودی کی سفاک پالیسیوں کی بھینٹ چڑھ رہے ہیں۔

وزیراعظم نے اپنے ٹوئٹ میں عالمی جریدے ’دی اکنامسٹ ‘ کی حالیہ رپورٹ کی تصویر بھی منسلک کی ہے۔

خیال رہے کہ اکنامسٹ گروپ کے ہفتہ وار جریدے ’ دی اکنامسٹ ‘ نے ’ان ٹولرنٹ انڈیا ‘ کے عنوان سے رپورٹ جاری کی ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کس طریقے سے دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کو خطرے میں ڈال رہے ہیں۔

چند روز قبل امریکی نشریاتی ادارے سی این بی سی کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا تھا کہ 'کشمیر اس سے کہیں زیادہ سنجیدہ مسئلہ ہے جتنا لوگ یا دنیا سمجھتی ہے، مسئلہ یہ ہے کہ بھارت پر انتہا پسندانہ نظریہ غالب آچکا ہے جسے ہندوتوا یا آر ایس ایس کہا جاتا ہے اور نریندر مودی اس انتہا پسند تنظیم کا تا حیات رکن ہے'۔

مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا تھا کہ '80 لاکھ لوگ گزشتہ سال 5 اگست سے محاصرے میں ہیں، بھارتی فورسز ہزاروں کشمیری نوجوانوں کو تحویل میں لے چکی ہے اور ان کے تمام سیاسی رہنماوں کو گرفتار کرلیا گیا ہے'۔

گزشتہ برس 5 اگست کو بھارت نے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرتے ہوئے دو وفاقی اکائیوں میں تقسیم کردیا تھا جس کے باعث مقبوضہ وادی اپنے پرچم اور آئین سے محروم ہوگئی ہے۔

بعدازاں کہ گزشتہ برس 11 دسمبر کو بھارت نے پارلیمنٹ سے شہریت ترمیمی ایکٹ منظور ہوا جس کے تحت 31 دسمبر 2014 سے قبل 3 پڑوسی ممالک سے بھارت آنے والے ہندوؤں، سکھوں، بدھ متوں، جینز، پارسیوں اور عیسائیوں کو بھارتی شہریت دی جائےگی۔

جس کا اطلاق رواں برس 10 جنوری سے کیا گیا جس کے خلاف بھارت بھر میں مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے جس میں کئی افراد ہلاک بھی ہوچکے ہیں۔

اس بل کی مخالفت کرنے والی سیاسی جماعتوں اور شہریوں کا کہنا ہے کہ بل کے تحت غیر قانونی طور پر بنگلہ دیش سے آنے والے ہندو تارکین وطن کو شہریت دی جائے گی، جو مارچ 1971 میں آسام آئے تھے اور یہ 1985 کے آسام معاہدے کی خلاف ورزی ہوگی۔

سب سے زیادہ دیکھی گئی پاکستان خبریں
اہم ترین پاکستان خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری