وحدت امت کانفرنس؛ مذہب کے نام پر دہشت گردی، انتہا پسندی، فرقہ وارانہ تشدد اسلام مخالف قرار


وحدت امت کانفرنس؛ مذہب کے نام پر دہشت گردی، انتہا پسندی، فرقہ وارانہ تشدد اسلام مخالف قرار

پاکستان میں مذہب کے نام پر دہشت گردی، انتہا پسندی، فرقہ وارانہ تشدد اور قتل و غارت گری کو اسلام مخالف قرار دیتے ہوئے پیر کو تمام مکاتب فکر اور مذاہب کے رہنماؤں نے اس سے مکمل لاتعلقی کا اعلان کیا۔

تسنیم خبررساں ادارے کے مطابق،  اسلام آباد ایوان صدر میں منعقدہ وحدت امت کانفرنس  کا انعقاد کیا گیا جس کے اختتام پر جاری مشترکہ اعلامیے میں دہشت گردی، انتہا پسندی، فرقہ وارانہ تشدد اور قتل و غارت گری کو اسلام مخالف قرار دیتے ہوئے پیر کو تمام مکاتب فکر اور مذاہب کے رہنماؤں نے اس سے مکمل لاتعلقی کا اعلان کیا

کانفرنس میں مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے علمائے کرام اور مشائخ نے بھی شرکت کی۔

 کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے صدر ڈاکٹر عارف علوی ، وزیر مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی پیر نورالحق قادری کے علاوہ مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے علمائے مشائخ نے بھی خطاب کیا۔

اعلامیہ میں کہا گیا کہ "کوئی بھی اسپیکر ، خطیب ، ذاکر ، مبلغین انبیاء (ع) ، اہل بیت (ع) ، صحابہ رسول (رح) ، خلفائے راشدین (رح) ، ازدواج مطہرات (رح) ، آئمہ اطہار (ع) اور حضرت امام مہدی (ع) کی توہین یا توہین رسالت میں ملوث نہیں ھوں گے اور اگر کوئی اس میں ملوث پایا گیا تو تمام مکاتب فکر اس سے لاتعلقی کا اعلان کر دیں گے اور ایسے شخص کے خلاف قانون کے تحت سخت کارروائی کی جائے گی ، "

"کسی بھی اسلامی فرقے کو کافر قرار نہیں دیا جانا چاہئے اور کسی بھی مسلمان یا غیر مسلم فرد کے غیرقانونی قتل کا حکم نہیں دیا جانا چاہئے ، اور تمام مذاہب اور فرقوں سے تعلق رکھنے والے افراد کو پاکستان کے آئین کے مطابق اپنی ذاتی اور مذہبی زندگی گزارنی چاہئے۔"

 ایسی کتابوں ، لٹریچر اور تحریروں کی کوئی اشاعت اور تقسیم نہیں ہونی چاہئے ، جو نفرت کو فروغ دیتے ہیں اور لوگوں کے مذہبی جذبات کو مجروح کرتے ہیں۔

اشتعال انگیز اور نفرت انگیز مواد پر مبنی کیسٹس اور انٹرنیٹ ویب سائٹوں پر مکمل پابندی عائد ہونی چاہئے۔

نفرت انگیز اور چوٹ پہنچانے والے جذبات کو فروغ دینے والے اشتعال انگیز نعروں کا تدارک کیا جائے گا اور آئمہ، فقہ اور مجتہدین کی عزت کی جانی چاہئے۔

 "ایک دوسرے کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لئے مشترکہ عوامی اجلاس منعقد کیا جائے گا۔"

 "چونکہ مسلمانوں کے علاوہ غیر مسلم بھی پاکستان میں مقیم ہیں، اسلامی شریعت کے مطابق، ان کی عبادت گاہوں، مقدس مقامات کے ساتھ ساتھ جان و مال کا تحفظ بھی مسلمانوں اور حکومت کا فرض ہے؛ لہذا، جو لوگ غیر مسلموں کی عبادت گاہوں، ان کے مقدس مقامات اور جان و مال سے بے اعتنائی کا مرتکب ہو رہے ہیں ان کے ساتھ حکومت کو سختی سے نمٹا جانا چاہئے۔

اعلامیے میں مزید کہا گیا ہے کہ چونکہ پیغامِ پاکستان متفقہ دستاویز ہے ، لہذا اس کی قانونی حیثیت کے لئے مشاورت کا عمل فوری طور پر شروع کیا جانا چاہئے۔

شریعت میں فتویٰ کی بہت زیادہ اہمیت ہے، تو صرف قرآن و سنت کی روشنی میں دیا گیا فتویٰ قابل اعتبار ہوگا۔  قرآن و سنت کی تعلیمات کے منافی ہونے پر فتویٰ دینے والے کے خلاف فوری کارروائی کی جائے گی۔

 "محرم الحرام کے دوران یا اس سے قبل مقدس شخصیات کی بے عزتی میں ملوث عناصر کے خلاف فوری طور پر کارروائی کی جانی چاہئے اور مجرموں کو جلد ہی سزا دی جانی چاہئے۔"

 

سب سے زیادہ دیکھی گئی پاکستان خبریں
اہم ترین پاکستان خبریں
اہم ترین خبریں
خبرنگار افتخاری